.

اسرائیل نے فلسطینیوں کے القدس داخلے پر پابندی لگا دی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیل نے مقبوضہ بیت المقدس کے قدیمی علاقے میں فلسطینیوں کے داخلے پر دو روز کی پابندی عائد کر دی ہے۔ صہیونی پولیس کا اتوار کے روز سامنے آنے والا اعلان یہودی آبادکاروں پر دوہرے حملے اور پھر اسرائیل کی جوابی کارروائی میں دو فلسطینیوں کی شہادت کے بعد سامنے آیا ہے۔

اس اعلان سے مشرقی یروشلم کے ضمن کردہ وہ فلسطینی بڑی تعداد میں متاثر ہوں گے جو قدیمی شہر میں نہیں رہتے۔ اعلان کے بموجب سیاح، علاقے کے رہائشی، کاروباری افراد، سکول جانے والے بچے ہی قدیمی شہر میں داخل ہو سکیں گے۔

یہ پابندی ہفتے کے روز چھرا گھونپ کر اسرائیلی شہری کو زخمی کرنے والے فلسطینی کی صہیونی پولیس کی فائرنگ سے شہادت کے بعد پیش آیا۔ اس واقعہ کے چند ہی گھنٹوں بعد فلسطینی نوجوان نے دو یہودی آبادکاروں کو ہلاک کر دیا۔

ہلاکت کا تازہ ترین واقعہ مغربی یروشلم میں ایک فلسطینی نوجوان کے ہاتھوں گلی سے گذرنے والے یہودی آبادکار کی ہلاکت کی صورت سامنے آیا، جس کے بعد پولیس نے حملہ آور فلسطینی کو بھی گولی مار کر شہید کر دیا۔

امریکا نے یروشلم میں اسرائیلیوں پر فلسطینی حملوں کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہمیں غرب اردن اور یروشلم میں بڑھتی ہوئی کشیدگی پر شدید تشویش ہے۔ ہم تمام فریقوں پر زور دیتے ہیں کہ وہ حالات معمول پر لانے کے لئے مثبت اقدام اٹھائیں اور صورتحال کو مزید خراب ہونے سے بچائیں۔