.

شام میں اسپتالوں پر فضائی حملوں میں 35 افراد ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

فرانس میں قائم ڈاکٹروں کی عالمی تنظیم طبیبان ماورائے سرحد (ایم ایس ایف) نے کہا ہے کہ شام میں اسپتالوں پر حالیہ فضائی حملوں میں پینتیس مریض اور طبی عملے کے ارکان ہلاک اور ستر سے زیادہ زخمی ہوگئے ہیں۔

ایم ایس ایف نے جمعرات کو جاری کردہ ایک بیان میں فضائی حملوں میں ان ہلاکتوں کی اطلاع دی ہے لیکن یہ نہیں بتایا ہے کہ یہ فضائی حملے کس ملک کے لڑاکا طیاروں نے کیے ہیں۔ اس وقت شام میں صدر بشارالاسد کی وفادار فوج کے علاوہ روس اور امریکا کی قیادت میں اتحادی ممالک کے لڑاکا طیارے داعش اور دوسرے باغی گروپوں پر فضائی بمباری کر رہے ہیں۔

ایم ایس ایف کے مطابق ستمبر کے بعد سے شمالی صوبوں ادلب ،حلب اور حماہ میں بارہ اسپتالوں کو فضائی بمباری میں نشانہ بنایا گیا ہے،ان میں چھے اسپتال ایم ایس ایف کے زیر اہتمام چل رہے تھے۔تنظیم کو ان اسپتالوں کو بند کرنا پڑا ہے اور اس کی چار ایمبولینس گاڑیاں تباہ ہوگئی ہیں۔

بیان کے مطابق ''ان میں سے ایک اسپتال کو دوبارہ کھول دیا گیا ہے۔ البتہ ایمرجنسی، زچہ وبچہ مرکز، پیڈیاٹرک اور بنیادی صحت کی خدمات کے شعبے کو نہیں کھولا گیا ہے''۔اس تنظیم کا کہنا ہے کہ ان حملوں کے نتیجے میں ہزاروں لوگ اپنے گھر بار چھوڑنے پر مجبور ہوگئے ہیں۔

شام میں ایم ایس ایف کے سربراہ سائلوین گرولیکس کا کہنا ہے کہ ''شام میں گذشتہ چار سال سے زیادہ عرصے سے جاری جنگ کو ملاحظہ کرنے کے بعد میں حیران ہوں کہ کیسے تنازعے کے تمام فریق بآسانی عالمی انسانی قانون کو پامال کر رہے ہیں''۔

روس نے 30 ستمبر کو شامی صدر بشارالاسد کی حمایت میں داعش اور دوسرے باغی گروپوں کے خلاف فضائی حملوں کا آغاز کیا تھا لیکن اس فضائی بمباری میں باغیوں کے علاوہ عام شہریوں کی ہلاکتوں کی بھی بڑی تعداد میں ہلاکتیں ہورہی ہیں جس پر اس کو کڑی تنقید کا سامنا ہے۔ترکی اور مغربی ممالک کا کہنا ہے کہ روسی طیارے داعش یا القاعدہ سے وابستہ گروپ النصرۃ محاذ کو اپنے حملوں میں نشانہ بنانے کے بجائے شامی فوج سے جنگ آزما دوسرے باغی گروپوں پر حملے کر رہے ہیں۔

امریکا کی قیادت میں داعش مخالف اتحاد میں ساٹھ سے زیادہ ممالک شامل ہیں اور وہ جون 2014ء سے عراق میں داعش کے ٹھکانوں پر فضائی حملے کررہے ہیں۔امریکی اتحادیوں نے گذشتہ سال ستمبر میں اس سخت گیر گروپ کے خلاف فضائی بمباری کا آغاز کیا تھا۔ گذشتہ اتوار تک اتحادی طیاروں نے شام میں کل 2679 فضائی حملے کیے تھے۔