.

غربِ اردن :اسرائیلی فوجیوں کی فائرنگ سے فلسطینی شہید

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیلی فوجیوں نے مقبوضہ مغربی کنارے کے شمالی علاقے میں ایک سرحدی گذرگاہ پر ایک فلسطینی کو گولی مار کر شہید کردیا ہے۔

اسرائیلی پولیس نے غرب اردن میں فلسطینیوں کے خلاف حالیہ تشدد آمیز کارروائیوں کے دوران اختیار کردہ مؤقف کے عین مطابق یہ دعویٰ کیا ہے کہ اس فلسطینی نے اسرائیل کے ساتھ واقع سرحدی گذرگاہ پر فوجیوں کو چاقو گھونپنے کی کوشش کی تھی۔شہید کے ایک ساتھی کو گرفتار کر لیا گیا ہے۔

یکم اکتوبر کے بعد سے مقبوضہ مغربی کنارے اور بیت المقدس میں اسرائیلی سکیورٹی فورسز کی کارروائیوں میں اب تک انہتر فلسطینی شہید ہوچکے ہیں۔ان میں نصف کے بارے میں بتایا گیا ہے کہ وہ مبینہ طور پر حملہ آور تھے اور ان کے چاقو حملوں میں نو اسرائیلی ہلاک ہوئے ہیں۔

تشدد کے ان واقعات کے بعد سے غربِ اردن کے شہروں اور قصبوں میں کشیدگی پائی جارہی ہے اور اسرائیلی فوجیوں کے علاوہ یہودی آبادکاروں نے بھی حالیہ دنوں میں فلسطینیوں کو تشدد بنایا ہے۔انتہا پسند صہیونی وزیراعظم بنیامین نیتن یاہو نے چاقو گھونپنے کے واقعات کے بعد فلسطینیوں کے خلاف تادمِ مرگ جنگ کا اعلان کررکھا ہے۔ان کے حکم پر اسرائیلی فورسز کی نہتے فلسطینیوں کے خلاف ظالمانہ کارروائیوں کے پیش نظر اس خدشے کا اظہار کیا جارہا ہے کہ مقبوضہ فلسطینی علاقوں میں صہیونی قبضے کے خلاف نئی انتفاضہ تحریک شروع ہوسکتی ہے۔