.

لاہور: زیر تعمیر فیکٹری گرنے سے 18 مزدور جاں بحق

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان کے سب سے بڑے صوبہ پنجاب کے دارالحکومت لاہور میں ایک فیکٹری کی زیر تعمیر عمارت گرنے سے اٹھارہ مزدور جاں بحق اور متعدد زخمی ہو گئے ہیں۔

عینی شاہدین کے مطابق لاہور کے سندر انڈسٹریل اسٹیٹ میں واقع فیکٹری کی چوتھی منزل پر تعمیراتی کام جاری تھا۔ اس دوران عمارت اچانک دھڑام سے گرگئی ہے۔ اس فیکٹری میں پولی تھین کے بیگ ( پلاسٹک شاپر) تیار کیے جاتے ہیں۔

حادثے کے وقت فیکٹری میں قریباً ڈیڑھ سو مزدور کام کر رہے تھے۔عینی شاہدین کا کہنا تھا کہ انھوں نے ملبے تلے افراد کے چیخنے چلانے کی آوازیں سنی ہیں۔ امدادی رضاکاروں نے تیس سے زیادہ زخمیوں کو ملبےسے نکال کر شہر کے مختلف اسپتالوں میں منتقل کردیا ہے اور جائے حادثہ پر امدادی سرگرمیاں جاری ہیں۔

ریسکیو حکام نے بدھ کی شب بتایا ہے کہ ابھی ایک سو کے لگ بھگ افراد ملبے تلے دبے ہوئے ہیں۔ان میں کم عمر ملازمیں بھی شامل ہیں۔اس لیے ہلاکتوں میں اضافے کا خدشہ ہے۔ ملبے تلے افراد کو نکالنے کے لیے بھاری مشینری استعمال کی جا رہی ہے۔

لاہور کے ضلعی رابطہ افسر (ڈی سی او) کیپٹن عثمان نے کہا ہے کہ ریسکیو آپریشن مکمل ہونے کے بعد ہی ہلاکتوں اور زخمیوں کی حقیقی تعداد کا پتا چل سکے گا۔ انھوں نے دعویٰ کیا ہے کہ عمارت کا ملبہ ہٹانے اور زخمیوں کو نکالنے کے لیے تمام دستیاب وسائل استعمال کیے جا رہے ہیں۔

پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کے مطابق فوج کی امدادی ٹیمیں بھی جائے وقوعہ پر پہنچ گئی ہیں اور وہ ضلعی انتظامیہ کے ساتھ مل کر ملبے تلے دبے افراد کی تلاش اور انھیں نکالنے کی کارروائی میں شریک ہیں۔

ایک مزدور محمد رفیق نے مقامی ٹی وی چینلز کو بتایا ہے کہ وہ فیکٹری کی چوتھی منزل میں تعمیراتی کام میں مصروف تھے کہ اس دوران پوری عمارت ہی منہدم ہو گئی۔ انھوں نے مزید بتایا ہے کہ واقعے کے وقت فیکٹری میں ڈیڑھ سو سے زیادہ افراد کام کر رہے تھے۔