.

شام: شیعہ مبلغ سمیت سات ایرانی جنگجو ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام میں صدر بشارالاسد کے دفاع میں لڑنے والے ایرانی پاسداران انقلاب کے سات اہلکار ہلاک ہو گئے ہیں۔ مارے جانے والوں میں ایک شیعہ مسلک کے ایک عالم دین اور شامی فوج کی ٹریننگ اور مشاورتی رہ نمائی کرنے والے ایک سینیر عہدیدار بھی شامل ہیں۔

خبر رساں ایجنسی"فارس" کی رپورٹ کے مطابق دمشق کے نواح میں اپوزیشن فورسز کے ساتھ لڑائی میں ملٹری ایڈوائرز اسماعیل سیرت نیا اس وقت ہلاک ہوئے جب وہ شامی فوجیوں کی جنگی امور میں رہ نمائی میں مصروف تھے۔ اس کے علاوہ کیپٹن موسیٰ جمیشدیان، شیعہ مبلغ علی تمام زادہ، جامع یزد میں پاسیج فورس کے ایک اہم کمانڈر محمدحسین محمد خانی اور میثم مداوری بھی حالیہ ایام میں شامی فوجیوں کے ساتھ لڑائی میں ہلاک ہوئے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق جمشیدیان نامی فوجی عہدیدار کا تعلق پاسداران انقلاب کے "نجف الاشرف 8" بریگیڈ سے ہے۔ اس کے علاوہ "محمد رسول اللہ فورس" کے ایک افسر قدیر سرلک کو حلب میں ایک گاڑی پر راکٹ حملے میں نشانہ بنایا گیا جس میں وہ ہلاک ہو گئے۔ ایرانی ذرائع ابلاغ کا کہنا ہے کہ پاسداران انقلاب کے ایک عہدیدار روح اللہ قربانی بھی حلب میں ایک راکٹ حملے میں ہلاک ہوئے۔