.

داعش نے روسی یرغمالی کا سرقلم کردیا

شام میں روسی کارروائی کے بعد داعش کی پہلی کارروائی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شدت پسند تنظیم دولت اسلامی "داعش" نے اپنے ہاں یرغمال بنائے گئے ایک روسی شہری کا سر قلم کر دیا۔ داعش کی جانب سے کسی روسی شہری کا قتل شام میں روس کے فوجی آپریشن کے آغاز کے بعد پہلا واقعہ ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق "داعش" کی جانب سے جاری کردہ ایک ویڈیو فوٹیج میں روسی شہری کو ذبح کرتے دکھایا گیا ہے۔ داعش کی جانب سے مقتول پر تنظیم کے خلاف مخبری کا الزام عاید کیا گیا ہے۔ یرغمالی روسی کو نارنگی رنگ کا یونیفارم پہنایا گیا ہے جسے بعد ازاں ایک نقاب پوش جنگجو ذبح کر کے اس کا سر تن سے جدا کر دیتا ہے۔

داعش کی جانب سے روسی یرغمالی کو ہلاک کرنے کی فوٹیج SITE Intelligence Group نے سوشل میڈیا سے حاصل کی جسے بعد ازاں بڑے پیمانے پر دیکھا گیا ہے۔

ویب پورٹل "سائیٹ" کے مطابق داعشی جنگجوؤں نے جس یرغمالی کو ہلاک کیا ہے اسے کچھ عرصہ قبل شام سے اغواء کیا گیا تھا۔داعش نے اس پر جاسوسی کا الزام عاید کیا ہے۔ داعش کی جانب سے ایک روسی کو یرغمال بنائے جانے کے بعد ماسکو کو دھمکی دی تھی کہ اگر اس نے شام میں داعش کے خلاف فضائی حملے بند نہ کیے تو یرغمالی کو قتل کر دیا جائے گا تاہم روس نے داعش کے ہاں اپنے کسی شہری کو یرغمال بنائے جانے کی تصدیق سے انکار کیا تھا۔

"سائیٹ" نے مقتول روسی کی شناخت "خاسییف ماگو مییڈ" کے نام سے کی ہے۔ داعش کا کہنا ہے کہ روسی خفیہ ادارے نے ماگومیڈ کو شام میں دولت اسلامی کی جاسوسی کے لیے بھیجا تھا۔ داعش کی جانب سے یرغمالی کو ہلاک کیے جانے کی ویڈیو میں روسی فوج کو مزید سنگین نتائج کی دھمکی دی ہے اور کہا ہے کہ روسیوں کو اسی طرح کے انجام سے دوچار کیا جائے گا۔