شامی حکومت اور اپوزیشن میں مذاکرات جنوری میں ہوں گے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سعودی عرب کی میزبانی میں ریاض میں منعقد ہونے والے شامی اپوزیشن کے اجلاس میں اپوزیشن نے کہا ہے کہ ان کی بشارالاسد کی حکومت کے ساتھ پہلی باضابطہ ملاقات پیش آئند ماہ جنوری میں ہو گی۔

العربیہ ٹی وی کے مطابق شامی اپوزیشن کی جانب سے بشارالاسد کی نمائندوں کے ساتھ براہ راست بات چیت کا اعلان ایک ایسے وقت میں کیا گیا ہے جب سعودی عرب نے شامی بحران کے سیاسی حل میں پیش رفت کے لیے حزب اختلاف کے تمام دھڑوں کو ایک موقف پر متحد کرنے کے لیے ان کا مشترکہ اجلاس منعقد کیا ہے۔ شامی اپوزیشن کا اجلاس آٹھ دسمبر کو ریاض میں شروع ہوا تھا۔ دو روزہ اجلاس میں شام کے موجودہ بحران کے حل کے لیے مختلف پہلوئوں پر طویل غور و خوض کیا گیا۔ اس اجلاس میں شامی اپوزیشن کے سیاسی اور اعتدال پسند عسکری گروپوں کے نمائندوں نے شرکت کی۔

سعودی عرب کی کوششوں سے منعقد ہونے والے اس اجلاس کی اہمیت اس لیے بھی دو چند ہے کیونکہ اس میں پہلی بار شام کے حکومت مخالف مگر اعتدال پسند گروپوں کوایک جگہ جمع کیا گیا۔ یہ بھی اہم پیش رفت ہے کہ وہ ایک موقف کی طرف بڑھ رہے ہیں۔

ریاض اجلاس کے بعد جاری کردہ اعلامیے میں اپوزیشن نے شام کی سلامتی اور سالمیت کو یقینی بنانے، ملک کے جمہوری تشخص کو برقرار رکھنے، ریاست کے تمام طبقات کو حکومت میں نمائندگی دینے، فوج اور سیکیورٹی اداروں کی نئی بنیادوں پر تشکیل کے ساتھ ملک کے دیگر اداروں کو برقرار رکھنے پر بھی اتفاق رائے پایا گیا۔

بیان میں شامی حکومت کی جانب سے اپنی عوام کے خلاف جاری منظم ریاستی دہشت گردی کو مسترد کرتے ہوئے اپوزیشن کی اعتدال پسند عسکری قوتوں سے مطالبہ کیا گیا کہ وہ شام میں موجود غیرملکی جنگجوئوں کو نکال باہر کریں۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ شام کے مستقبل کے سیاسی ڈھانچے کی تشکیل نو صرف اعتدال پسند قوتیں کریں گی اور وہی تمام معاملات کی ذمہ دار ہوں گی جب کہ نئے شام میں بشارالاسد یا ان کے کسی بھی مقرب شخص کا کوئی کردار نہیں ہو گا۔

اجلاس میں شریک شامی اپوزیشن کے نمائندوں نے جنیوا ون اجلاس کے تحت بات چیت کا عمل آگے بڑھانے سے بھی اتفاق کیا۔ جنیوا ون اجلاس میں صدر بشارالاسد کا کسی قسم کا سیاسی کردار تسلیم نہیں کیا گیا ہے۔ شامی اپوزیشن بھی اس پر متفق ہے۔ تاہم جنگ بندی پر امن انتقال اقتدار اور ریاستی اداروں کی تشکیل نو کی شرط پر کی جائے گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں