حوثیوں کا صنعاء میں فلسطینی سفیر کی رہائش گاہ پر دھاوا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

یمن میں ایران نواز حوثی شدت پسندوں کی جانب سے قوم کو گمراہ کرنے کے لیے بہ ظاہر امریکا اور اسرائیل کی سخت مخالفت اور فلسطینیوں کی بھرپور حمایت کا تاثر دیا جاتا رہا ہے مگر گذشتہ روز حوثیوں کی فلسطینیوں کے حقوق کی حمایت کا بھرم اس وقت کھل گیا جب باغیوں نے صنعاء میں قائم فلسطینی کی رہائش گاہ پر یلغار کر دی۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق حوثی باغیوں نے صنعاء میں واقع فلسطینی سفارت خانے پر دھاوا بولا اور گھر میں توڑپھوڑ کی۔ ’امریکا اور اسرائیل مردہ باد‘ کے نعرے لگانے والوں کی جانب سے فلسطینی سفیر کے گھر میں گھس کر توڑپھوڑ کرنے پر عوامی حلقوں میں شدید رد عمل سامنے آیا ہے۔

یمنی ذرائع کا کہنا ہے کہ مسلح حوثیوں کے ایک گروپ نے ہفتے کے روز صنعاء میں متعین فلسطینی سفیر دیاب اللوح کے گھر میں گھس کر توڑپھوڑ کی۔ فلسطینی سفیر کے مکان کا محاصرہ کئی گھنٹے تک جاری رکھا۔

یمنی وزارت خارجہ نے واقعے کی شدید مذمت کرتے ہوئے دیاب اللوح کے گھر پر دھاوا بولنے اور توڑپھوڑ کی ذمہ داری حوثی شدت پسندوں پر عاید کی ہے۔ وزارت خارجہ کا کہنا ہے کہ مسلح حوثیوں اور فلسطینی سفیر کی رہائش گاہ پر متعین محافظوں کے درمیان جھڑپ میں ایک محافظ بھی جاں بحق ہوا ہے۔

یمن کی خبر رساں ایجنسی’’سبا‘‘ نے وزارت خارجہ کے ایک ذریعے کے حوالے سے اطلاع دی ہے کہ صنعاء میں فلسطینی سفیر کے گھر پر دھاوا مسلح حوثیوں کی جانب سے بولا گیا تھا۔ گھر میں داخل ہونے والے شدت پسندوں نے توڑپھوڑ کی اور وہاں پر موجود افراد کو زد و کوب کیا۔

خیال رہے کہ یمن کے دارالحکومت صنعاء میں فج عطان کالونی میں واقع فلسطینی سفارت خانے کی جانب سے گذشت بدھ کو جاری کردہ ایک بیان میں سفارتی سرگرمیاں دوبارہ سے شروع کرنے کا اعلان کیا گیا تھا۔ قبل ازیں سفارت خانے کے مرمتی کام کی وجہ سے وہاں پر سفارتی امور کی انجام دہی روک دی گئی تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں