.

مقبوضہ القدس :فلسطینی شہید،چاقو حملے میں تین اسرائیلی زخمی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیلی پولیس نے مقبوضہ بیت المقدس میں فائرنگ کرکے ایک فلسطینی کو شہید اور ایک کو زخمی کردیا ہے۔ان پر الزام عاید کیا گیا ہے کہ انھوں نے تین یہودیوں کو چاقو گھونپ کر زخمی کردیا تھا۔

اسرائیلی پولیس کے ترجمان میکی روزنفیلڈ کی اطلاع کے مطابق ان دونوں فلسطینیوں نے مقبوضہ بیت المقدس کے فصیل کےاندر آباد قدیم شہر کے ایک مرکزی داخلی دروازے یافا گیٹ کے باہر اسرائیلیوں پر چاقو سے وار کیے تھے۔اس کے ردعمل ان دونوں کو گولی مار دی گئی جس سے ایک فلسطینی موقع پر جان کی بازی ہار گیا اور ایک زخمی ہوگیا ہے۔

واضح رہے کہ مقبوضہ مغربی کنارے اور بیت المقدس میں اسرائیلی سکیورٹی فورسز کی یکم اکتوبر سے جاری کارروائیوں میں ایک سو اٹھارہ فلسطینی شہید ہوچکے ہیں۔ان میں ستر سے زیادہ کے بارے میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ وہ مبینہ طور پر حملہ آور تھے اور ان کے چاقو حملوں ،فائرنگ اور گاڑیوں کو راہ چلتے لوگوں پر چڑھانے سے انیس اسرائیلی ہلاک اور متعدد زخمی ہوگئے ہیں۔

اسرائیلی فورسز مبینہ طور پر چاقو حملے کرنے والے فلسطینی نوجوانوں کے خلاف طاقت کا وحشیانہ استعمال کررہی ہیں اور اسرائیلی فوجی معمولی سا شک گزرنے پر بھی فلسطینی مرد وخواتین کو سر یا سینے میں گولی مار دیتے ہیں جس سے وہ موقع پر ہی ڈھیر ہوجاتے ہیں۔اسرائیلی حکام نے سکیورٹی فورسز کی جانب سے مقبوضہ بیت المقدس اور غربِ اردن سے تعلق رکھنے والے فلسطینیوں کے خلاف طاقت کے بے مہابا استعمال کے واقعات کی تحقیقات شروع کردی ہے۔

انتہاپسند صہیونی وزیراعظم بنیامین نیتن یاہو کی حکومت نے اکتوبر میں چاقو حملے کرنے والے فلسطینیوں کے مکانوں کو مسمار کرنے کی پالیسی کی منظوری دی تھی مگر اس کے باوجود تشدد کا سلسلہ جاری ہے۔انسانی حقوق کی عالمی تنظیمیں اور ناقدین اسرائیل کی اس ظالمانہ پالیسی کی مذمت کرچکے ہیں۔ان کا کہنا ہے کہ اس کے ذریعے ایک فرد کے جُرم کی سزا اس کے پورے خاندان کو دی جارہی ہے۔