.

عراقی فوج کے حملے میں داعش کے 300 جنگجو مارے گئے

ابوبکر البغدادی کی امریکا اور روس کے حملوں کے جواب میں سنگین نتائج کی دھمکی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراقی فوج نے شدت پسند تنظیم دولت اسلامی (داعش) کے زیرتسلط فلوجہ شہر میں بڑے زمینی حملے میں کم سے کم تین سو جنگجوؤں کو ہلاک کرنے کا دعویٰ کیا ہے۔

العربیہ کے نامہ نگار کے مطابق عراقی سیکیورٹی فورسز نے الفلوجہ شہر میں النعیمیہ کے مقام پر داعش کے خلاف کارروائی شروع کی۔ یہ کارروائی داعش کو الرمادی میں فوجی کمک روانہ کرنے سے روکنے کے لیے کی گئی ہے جس میں تنظیم کو بھاری جانی نقصان سے دوچار کیا گیا ہے۔

ذرائع کے مطابق عراقی فورسز نے زمینی کارروائی کے دوران الرمادی کی الحوز کالونی سے داعش کے جنگجوؤں کو نکال باہر کیا ہے، جس کے بعد فوج الرمادی کے وسط میں حکومتی مراکز کے بہت قریب پہنچ گئی ہے۔ العربیہ کی ٹیم نے بھی داعش سے چھڑائے گئےعلاقوں کا دورہ کیا ہے۔

قبل ازیں عراقی فوج کے زیرانتظام’’وار میڈیا سیل‘‘ کی جانب سے جاری کردہ بیان میں بتایا گیا تھا کہ فوج نے الرمادی میں فضائی حملے کے دوران داعش کے متعدد مراکز کو تباہ کرنے کے ساتھ ساتھ فلوجہ میں بھی داعش کو جانی نقصان سے دوچار کیا ہے۔

عراق کی ملٹری انٹیلی جنس ڈائریکٹوریٹ کے مطابق کارروائی کے دوران داعش کے اہم کمانڈر سامی بدیوی العیساوی کو بھی ہلاک کردیا گیا ہے۔ العیساوی الفلوجہ کے علاقے کا سیکیورٹی انچارج تھا۔ اسے الرمادی اسپتال کے قریب فضائی حملے میں ہلاک کیا گیا۔

داعش کے خلاف یہ تازہ کارروائی ایک ایسے وقت میں عمل میں لائی گئی ہے جب دوسری جانب عراقی حکومت داعش کے زیرقبضہ شمالی شہر موصل کو چھڑانے کے لیے فیصلہ کن تیاریوں میں مصروف ہے۔ عراقی وزیراعظم حیدر العبادی کا کہنا ہے کہ موصل کو داعش سے چھڑانے کا فیصلہ کن مرحلہ آپہنچا ہے۔ موصل جلد ہی داعش کے قبضے سے آزاد ہو جائے گا۔

البغدادی کی سنگین نتائج کی دھمکی

دوسری جانب داعش کے خود ساختہ خلیفہ ابو بکر البغدادی نے اپنے ایک تازہ صوتی پیغام میں کہا ہے کہ امریکا اور روس کے فضائی حملوں سے داعش کو کمزور نہیں کیا جا سکا ہے۔ اپنے پیغام میں البغدادی نے داعشی جنگجوؤں کو مخاطب کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہماری خلافت اور مملکت بہ خیر وعافیت ہے۔ جنگ جتنی شدت اختیار کرتی جا رہی ہے ہمارے عزم میں بھی اتنی طاقت کا اضافہ ہو رہا ہے۔

چوبیس منٹ کے آڈیو پیغام میں داعشی خلیفہ نے تنظیم کے خلاف کارروائی میں مصروف ممالک کو سنگین نتائج کی دھمکی دی اور کہا کہ داعش کے دشمنوں کو جلد اپنے کیے کا حساب دینا پڑے گا۔

خیال رہے کہ داعشی خلیفہ کا یہ صوتی پیغام ان کے زخمی ہونے کی خبروں کی سات ماہ کے بعد سامنے آیا ہے۔ اگرچہ اس آڈیو پیغام کی آزاد ذرائع سے تصدیق نہیں ہو سکی ہے اور نہ ہی یہ معلوم ہوا ہے کہ آیا یہ پیغام کب ریکارڈ کیا گیا تھا۔