یمن میں لڑائی اور فضائی حملوں میں 76 باغی ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

یمن میں محاذ جنگ سے ملنے والی تازہ ترین اطلاعات میں معلوم ہواہے کہ سعودی عرب کی قیادت میں جاری فضائی حملوں اور حکومت نواز مزاحمت کاروں کی کارروائیوں میں حوثی باغیوں اور مںحرف صدر علی عبداللہ صالح کی حامی ملیشیا کے کم سے کم 76عناصر ہلاک ہو گئے ہیں۔

یمن کے جنوب مغربی شہر تعز میں سوموار کو عوامی مزاحمتی فورسز کے ساتھ لڑائی میں کم سے کم 18 حوثی شدت پسند ہلاک اور دسیوں زخمی ہوئے ہیں۔ لڑائی میں حکومتی فورسز کے متعدد اہلکار بھی جاں بحق اور 12 زخمی ہوئے ہیں۔

ذرائع کے مطابق تعز میں الضباب اور ثعبات کے مقامات پر لڑائی میں دشمن کو بھاری جانی نقصان سے دوچار کیا گیا ہے جہاں حوثیوں کے متعدد حملے بھی ناکام بنا دیے گئے ہیں۔

بحر الاحمر کے ساحلی شہر المخا کے مقامی ذرایع نے گذشتہ روز لڑائی میں کم سے کم 40 حوثی باغیوں کی ہلاکت کی تصدیق کی ہے۔

المخا میں حکومت نواز فورسز کی زمینی کارروائیوں کے ساتھ ساتھ اتحادی طیاروں نے فضائی حملے بھی کیے ہیں۔ ذرائع کے مطابق اتحادی طیاروں نے المخاء کے شمالی علاقےمیں واقع العزیبی فارم ہاؤس میں باغیوں کے تین اہم مراکز کو نشانہ بنایا۔

ادھر شبوۃ گورنری میں فضائی حملوں میں کم سے کم آٹھ حوثی باغیوں اور علی صالح کے وفاداروں کی ہلاکت کی اطلاعات ہیں۔ اتحادی طیاروں نے عسیلان پہاڑی علاقوں میں بریگیڈ 19 کی مدد سے عسیلان پہاڑی علاقوں میں میزائل اڈے کو نشانہ بنایا اور میزائل لانچنگ اڈے کو تباہ کیا گیا ہے۔

شمالی گورنری صعدہ میں الصفراء کے مقام پر حوثیوں کے زیرقبضہ ڈاریکٹوریٹ کو فضائی حملوں سے نشانہ بنایا گیا جس میں کم سے کم پانچ باغی ہلاک ہوئے۔ صنعاء گونری میں چار اور شمالی صنعاء میں جدر کے مقام پر فضائی حملوں میں چار باغی مارے گئے۔

تعز گورنری سے اطلاعات ہیں کہ حکومتی فورسز نے گذشتہ روز دو مشتبہ حوثی مخبروں کو حراست میں لیا ہے۔ تفتیش کے دوران معلوم ہوا ہے کہ ان دونوں کا تعلق حوثیوں کے اس 65 رکنی گروپ سے ہے جسے جاسوسی کے ساتھ ساتھ فوجی اڈوں پر تعینات کیا گیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں