.

عوام عنقریب فتح کی خوشخبری سنیں گے: یمنی فوج

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن کی مسلح افواج کے سربراہ جنرل محمد علی المقدشی نے کہا ہے کہ فوج اور اس کے حامی مزاحمت کار ملک کو باغیوں کے پنجے سے آزاد کرانے کے قریب پہنچ گئے ہیں۔ آنے والے دنوں میں قوم کو حیران کن فتوحات کی خوشخبری سنائیں گے۔

العربیہ ٹی وی کے مطابق یمنی فوج کے سربراہ کا یہ بیان ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب دوسری جانب یمنی فوج اور آئینی حکومت کی بحالی کے لیے معاونت کرنے والی نجی ملیشیا نے کئی محاذوں پر فاتحانہ پیش قدمی کرتے ہوئے متعدد شہروں اور اہم تزویراتی مقامات سے حوثی باغیوں کو نکال باہر کیا ہے۔ حالیہ ایام میں الجوف اور مآرب میں باغیوں کو غیر معمولی کامیابیاں حاصل ہوئی ہیں۔ زمینی فوج کی پیش قدمی میں سعودی عرب کی قیادت میں اتحادی ممالک کے جنگی طیاروں کے فضائی حملوں کا بھی اہم کردار ہے۔

یمن کے محاذ جنگ سے ملنے والی اطلاعات میں بتایا گیا ہے کہ بدھ کو اتحادی طیاروں نے دارالحکومت صنعا کے شمال مغربی علاقے شملان میں متمرکز حوثی باغیوں اور علی عبداللہ صالح کے وفادار جنگجوؤں کے مراکز پر بمباری کی۔ طیاروں کی بمباری سے الدیلمی فوجی اڈے اور باغیوں کے زیر کنٹرول دارس کے مقام پر مشروبات کی ایک فیکٹری کو بھی نشانہ بنایا گیا، جسے باغی جنگی مقاصد میں استعمال کر رہے تھے۔

جنوبی یمن میں عدن کے کریتر کے مقام پر زور دار دھماکوں کی آوازیں سنی گئی ہیں۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ یہ دھماکے یمن کی سماج پارٹی برائے اصلاح کے صدر دفتر کے باہر بارود سے بھری ایک کار کے ذریعے کیا گیا۔ دھماکے کے بعد سماج پارٹی کے ہیڈکواٹرز کے آس پاس فائرنگ کی بھی آوازیں سنائی دیں۔ واقعے کے بعد یمنی فوج کے علاقے کو گھیرے میں لے کر کارروائی شروع کر دی تھی۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ مسلح جنگجوؤں نے اسی کالونی میں واقع ایک نجی بنک کو بھی گھیرے میں لے لیا تھا تاہم وہ اس میں لوٹ مار میں کامیاب نہیں ہو سکے۔

داریں اثنا تعز میں حوثی باغیوں اور علی صالح کی وفادار ملیشیا کی جانب سے حیفان گورنری اور دیگر مقامات پر مزید جنگجو تعینات کیے ہیں۔ تاہم عوامی مزاحمتی ملیشیا نے باغیوں کے زیر استعمال ایک میزائل اڈے کو راکٹوں سے تباہ کر دیا ہے۔ مآرب اور الجوف شہروں میں بھی حوثی باغیوں نے ناقابل یقین فتوحات حاصل کی ہیں اور دشمن کو کئی اہم مقامات سے پسپا کر دیا ہے۔