.

اسرائیلی فوجیوں کی فائرنگ سے چار فلسطینی شہید

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مقبوضہ مغربی کنارے اور مقبوضہ القدس میں اسرائیلی فوج نے دو واقعات میں فائرنگ کرکے چار فلسطینیوں کو شہید کردیا ہے اور حسب روایت مؤقف اختیار کیا ہے کہ انھوں نے اسرائیلی فوجیوں کو چاقو گھونپنے کی کوشش کی تھی۔

اسرائیلی فوج نے ایک بیان میں کہا ہے کہ چاقوؤں سے مسلح تین حملہ آوروں نے جوش عتصيون جنکشن پر پہرے پر مامور فوجیوں کو چاقو گھونپنے کی کوشش کی تھی۔فوجیوں نے تینوں کو جوابی فائرنگ کرکے موقع پر ڈھیر کردیا ہے۔

جوش عتصيون مقبوضہ بیت المقدس کے جنوب میں ایک یہودی بستی ہے۔اس کے جنکشن پر گذشتہ تین ماہ کے دوران تشدد کے متعدد واقعات پیش آچکے ہیں اور یہاں پر فلسطینی حملہ آوروں نے اسرائیلی فوجیوں اور شہریوں پر چاقو حملے کیے ہیں۔

ادھر مغربی کنارے کے شہر الخلیل کے شمال مشرق میں بھی تشدد کا ایک واقعہ پیش آیا ہے اور وہاں فوجیوں کو چاقو گھونپنے والے فلسطینی کو گولی مار کر شہید کردیا گیا ہے۔اسرائیلی فوج نے بیان میں کہا ہے کہ فورس نے حملے کو ناکام بناتے ہوئے حملہ آور کو گولی مار دی تھی جس کے نتیجے میں اس کی موت واقع ہوگئی ہے۔

اس کی شناخت خلیل شلالدہ کے نام سے کی گئی ہے۔اس کی عمر سولہ سال تھی اور اس کا تعلق الخلیل سے شمال مشرق میں واقع گاؤں سعیر سے تھا۔چند ہفتے قبل اسی جگہ بالکل اسی انداز میں اس کے ایک کزن کو بھی اسرائیلی فوجیوں نے گولی مار کر شہید کردیا تھا۔

جوش عتصيون میں شہید ہونے والے تینوں فلسطینی نوجوانوں کا تعلق بھی سعیر گاؤں سے ہے اور ان کی بھی شناخت ہوگئی ہے۔ان کے نام مہند قوازبہ عمر بیس سال،احمد قوازبہ عمر اکیس سال اور علاء قوازبہ عمر بیس سال ہے۔یہ تینوں اٹھارہ سالہ احمد قوازبہ کے رشتے دار تھے۔احمد کو اسرائیلی فوجیوں نے منگل کے روز جوش عتصيون جنکشن پر گولی مار کر شہید کردیا تھا۔

واضح رہے کہ مقبوضہ مغربی کنارے اور بیت المقدس میں اسرائیلی سکیورٹی فورسز کی یکم اکتوبر سے جاری تشدد آمیز کارروائیوں میں ایک سو تینتالیس فلسطینی شہید ہوچکے ہیں۔ان میں سے بیشتر کے بارے میں اسرائیلی فورسز نے دعویٰ کیا ہے کہ وہ مبینہ طور پر حملہ آور تھے اور انھوں نے یہودیوں پر چاقو حملوں کیے تھے یا اپنی گاڑیوں کو راہ چلتے راہ گیروں پر چڑھا دیا تھا جس سے بائیس اسرائیلی اور ایک امریکی شہری ہلاک اور متعدد زخمی ہوگئے ہیں۔

اسرائیلی فورسز مبینہ طور پر چاقو حملے کرنے والے فلسطینی نوجوانوں کے خلاف طاقت کا وحشیانہ استعمال کررہی ہیں اور اسرائیلی فوجی معمولی سا شک گزرنے پر بھی فلسطینی مرد وخواتین کو سر یا سینے میں گولی مار کر موت کی نیند سلا دیتے ہیں اور پھر ان پر چاقو حملہ آور ہونے کا الزام عاید کردیا جاتا ہے۔