.

یمن: تازہ لڑائی میں حوثی لیڈر سمیت 54 ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں محاذ جنگ سے اطلاعات آئی ہیں کہ اتحادی ممالک کے جنگی طیاروں اور زمینی فورسز کی تازہ کارروائیوں میں باغی حوثی گروپ کے ایک اہم لیڈر سمیت کم سے کم 54 افراد ہلاک اور دسیوں زخمی ہو گئے ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق ملک کی شمالی گورنری صعدہ میں فضائی حملوں کے نتیجے میں کم سے کم 30 حوثی باغی ہلاک اور کئی زخمی ہو گئے۔ اتحادی طیاروں کی جانب سے صعدہ میں حوثیوں کے زیرقبضہ ضحیان ڈاریکٹوریٹ کو نشانہ بنایا گیا۔

یمن کے مغربی شہر تعز سے ذرائع نے 10 حوثیوں کے ہلاک ہونے کی خبر دی ہے جب کہ گولہ باری سے 8 جنگجو زخمی بھی ہوئے ہیں۔

ہفتے کے روز تعز میں حیفان کے مقام پر حکومتی فورسز نے زمینی کارروائی کرتے ہوئے علی عبداللہ صالح اور حوثی باغیوں کے متعدد ٹھکانوں پر بمباری کی، جس کے نتیجے میں کئی جنگجو ہلاک اور زخمی ہوئے ہیں۔

حیفان سے ملنے والی اطلاعات میں بتایا گیا ہے کہ مزاحمت کاروں نے جبل الخراص کے مقام پر باغیوں کے ٹھکانوں پر ہاون راکٹوں سے حملہ کیا، جس کے نتیجے میں تین حوثی ہلاک اور متعدد زخمی ہوئے۔

یمن کی وسطی گورنری البیضاء میں حکومتی فوج نے مشعبہ دبان کے مقام پر گھات لگا کر حوثیوں پر حملہ کر دیا جس میں باغیوں کو پانچ لاشیں چھوڑ کر فرار ہونا پڑا۔اب گورنری میں بھی باغیوں کے حملےمیں پانچ حوثی باغیوں کے ہلاک ہونے کی اطلاعات ہیں۔

دارالحکومت صنعاء میں حکومتی فورز کی کارروائی میں حوثیوں کے اہم لیڈر بشارالموئید اور اس کے کئی دوسرے ساتھیوں کی ہلاکت کی تصدیق کی گئی ہے۔ الموئید کو صنعاء کے وسط میں شاہراہ الزبیری پر فائرنگ کےتبادلے کے دوران ہلاک کیا گیا۔