.

اسرائیلی فوج کا جنین کے ’قباطیا‘ قصبے میں کریک ڈاؤن

القدس کارروائی کے بعد قباطیا فوجی چھاؤنی میں تبدیل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مقبوضہ بیت المقدس میں کل بدھ کی شام ہونے والی مزاحمتی کارروائیوں کے بعد اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاھو کی زیرصدارت اہم اجلاس ہوا ہے جس میں امن وامان کی صورت حال کا جائزہ لیا گیا۔ اجلاس میں داخلی سلامتی کے وزیر گیلاد اردان اور اسرائیلی آرمی چیف بھی موجود تھے۔

درایں اثناء بیت المقدس میں فوجیوں پر ہونے والے فلسطینیوں کے حملوں کے بعد اسرائیلی فوج نے مقبوضہ مغربی کنارے کے شہر جنین میں قباطیا قصبے کا محاصرہ کر کے وسیع پیمانے پر کریک ڈاؤن شروع کیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق قباطیہ قصبے کو فوجی چھاؤنی میں تبدیل کر دیا گیا ہے۔ اسرائیلی قابض فورسز کا دعویٰ ہے کہ بیت المقدس میں فوجیوں پر حملہ کرنے میں ملوث فلسطینیوں کا تعلق قباطیہ کے علاقے سے ہے۔

نیتن یاھو کی زیرصدارت ہونے والے اجلاس میں قباطیہ کے بارے میں چار اہم فیصلے صادر کیےگئے ہیں۔

اول: جنین میں قباطیا قصبے کا مکمل محاصرہ

دوم: غرب اردن اور بیت المقدس میں فوج کی تعداد میں اضافہ

سوم: فلسطینیوں کی اندھا دھند گرفتاریاں

چہارم:فلسطین میں جاری تحریک انتفاضہ کا از سرنو جائزہ لے کر یہ طے کرنا کہ آیا یہ انفرادی نوعیت کے حملے ہیں یا ایک منظم تحریک کی شکل اختیار کرتے جا رہے ہیں۔

بیت المقدس میں کارروائی

بدھ کی شام مقبوضہ بیت المقدس میں فائرنگ کے واقعے میں کم سے کم تین اسرائیلی فوجی زخمی ہو گئے تھے۔ یہ واقعہ بدھ کی شام مشرقی بیت المقدس کے باب العامود کے مقام پر پیش آیا تھا۔

العربیہ ٹی وی کے نامہ نگار کے مطابق یہودی فوجیوں پر حملوں میں تین فلسطینی ملوث ہیں۔ صہیونی فوج نے انہیں جوابی کارروائی میں قتل کرنے کا دعویٰ کیا ہے۔ فوج کا کہنا ہے کہ حملہ آور مغربی کنارے کے جنین شہر میں قباطیہ قصبے سے تعلق رکھتے ہیں۔ انہوں نے بیت المقدس میں پہنچ کر باب العامود کے مقام پر بارڈر پولیس کے اہلکاروں پر قاتلانہ حملہ کیا جسے ناکام بنا دیا گیا۔

اسرائیلی پولیس کی خاتون ترجمان نے بتایا کہ فلسطینی حملہ آوروں نے یہودی فوجیوں پر حملہ باب العامود کے مقام پر کیا جہاں بہت زیادہ رش تھا۔ ’’رائیٹر‘‘ سے بات کرتے ہوئے ترجمان نے کہا کہ فلسطینیوں کی جانب سے فائرنگ اس وقت کی گئی جب پولیس نے انہیں شناخت کے لیے رکنے کا اشارہ کیا۔

خاتون ترجمان نے بتایا کہ ایک فلسطینی حملہ آور نے فوجی اہلکار پر چاقو سے حملہ کیا جس کے نتیجے میں وہ شدید زخمی ہوا ہے۔ جائے وقوعہ سے دو سیلنڈر بم بھی قبضے میں لیے گئے ہیں۔