.

یمن: باغی لڑائی کے لیے جرائم پیشہ قیدیوں سے مدد لینے پر مجبور

حوثیوں نے جرائم پیشہ قیدی جنگ میں جھونک دیے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں آئینی حکومت کے ایک ذریعے نے انکشاف کیا ہے کہ ایران نواز شیعہ حوثی باغیوں نے صنعاء کی جیلوں میں فوج داری مقدمات کے تحت قید گئے جرائم پیشہ عناصر کو رہا کرنے کے بعد انہیں جنگ کے لیے بھرتی کر لیا ہے جو حوثیوں کی صفوں میں لڑتے پائے گئے ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق یمنی حکومت کی جانب سے یہ انکشاف ایک ایسے وقت میں ہوا ہے جب حال ہی میں یہ خبر سامنے آئی تھی کہ حوثیوں نے الضالع گورنری کی سینٹرل جیل میں قید 500 جرائم پیشہ فراد کو رہا کر کے اپنی صفوں میں شامل کیا ہے۔ اسی طرح تعز کی سینٹرل جیل سے بھی سیکڑوں افراد کو رہا کیا گیا۔

یمنی حکومت کے ٹی وی چینل کی جانب سے نشر کردہ ایک رپورٹ میں بھی بتایا گیا ہے کہ حوثیوں نے جیلوں میں قید جرائم پیشہ عناصر کو حکومت مخالف لڑائی میں شمولیت کی غرض سے رہا کرنے کے بعد انہیں اپنی صفوں میں شامل کر لیا ہے۔

ٹی وی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ دارالحکومت صنعاء کے مشرقی علاقے نھم اور دیگر محاذوں پر شکست فاش کے بعد حوثیوں کو اپنی افرادی قوت بڑھانے کے لیے جرائم پیشہ قیدیوں کا سہارا لینا پڑا ہےاور انہوں نے دارالحکومت گورنریٹ کی جیل میں قید سیکڑوں جرائم پیشہ عناصر کو رہا کرنے کے بعد انہیں اپنی صفوں میں شامل کیا ہے۔

ٹی وی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ حوثیوں کے ترجمان ٹی وی ’’المیسرۃ‘‘ سے بات کرتے ہوئے رہا ہونے والے جرائم پیشہ عناصر نے باغیوں کے ساتھ مل کر حکومتی فورسز سے لڑںے کا عزم ظاہر کیا ہے۔