.

شام : داعش نے 30 کرد جنگجوؤں کو قیدی بنا لیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام کے شمال مشرقی صوبے الحسکہ میں واقع علاقہ الشدادی صوبے میں داعش تنظیم کا اہم ترین گڑھ شمار کیا جاتا ہے۔ یہاں گزشتہ کئی روز سے داعش تنظیم اور سیرئین ڈیموکریٹک فورسز (کردوں کے تحفظ کرنے والے یونٹوں) کے درمیان شدید جھڑپیں جاری ہیں۔ اس دوران داعش کی جانب سے ڈیموکریٹک فورسز کے 30 جنگجوؤں کو قیدی بنالینے کی خبریں بھی ہیں۔

شام میں انسانی حقوق کی رصدگاہ کے مطابق کرد یونٹوں سے لڑائی کے بعد داعش نے الشدادی شہر کے مغرب میں واقع گاؤں 47 پر دوبارہ قبضہ کر لیا ہے۔

کرد یونٹوں نے دو روز قبل پیش قدمی کرتے ہوئے ٹاؤن 47 کا کنٹرول حاصل کرلیا تھا اور وہ الحسکہ میں داعش کے مرکزی گڑھ کے قریب پہنچ گئے تھے۔ فریقین کے درمیان جھڑپوں کے دوران اتحادی طیاروں نے علاقے میں داعش کے ٹھکانوں کو فضائی بمباری کا نشانہ بنایا۔

یاد رہے کہ شامی رصدگاہ نے 18 فروری کو یہ معلومات فراہم کی تھیں کہ داعش کے ارکان اور کمانڈروں نے گزرے دنوں میں اپنے گھروالوں کو الشدادی شہر اور اس کے نواح سے منتقل کرکے دیر الزور صوبے میں اپنے زیرقبضہ علاقوں میں پہنچا دیا ہے۔ یہ اقدام الشدادی پر اتحادی افواج کی بمباری اور سیریئن ڈیموکریٹک فورسز کے قبضے کے اندیشے کے تحت کیا گیا۔