.

عراق جنگ کے دوران 700 قیدی قتل کرنے کا ایرانی اعتراف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایران کی مجلس شُوریٰ کے ایک سرکردہ رکن نے اعتراف کیا ہے کہ سنہ 1980ء تا 1988ء کے دوران عراق پر حملے کے دوران المعارہ اور بصرہ شہروں میں در ازندازی کرتے ہوئے 600 سے 700 عراقی قیدیوں کو موت کے گھاٹ اتار دیا گیا تھا۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق ایرانی مجلس شوریٰ کے رکن پارلیمنٹ نادر قاضی بور کا ایک ویڈیو بیان سامنے آیا ہے جس میں ان کا کہنا ہے کہ "عراق جنگ کے دوران ہمارے فوجیوں نے عراق میں گھس کر چھ سے سات سو کے درمیان عراقی قیدیوں کو قتل کردیا تھا۔"

ویڈیو فوٹیج میں ایرانی رکن پارلیمنٹ کو حالیہ پارلیمانی انتخابات میں کامیابی کے بعد مغربی ایران کے رومیہ شہر میں اپنے حامیوں کے اجتماع سے خطاب کرتے دیکھا اور سنا جا سکتا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ عراق جنگ کے دوران 13 افراد پر مشتمل ایک گروپ کے کمانڈر تھے۔ ہمیں حکم دیا گیا تھا کہ اللہ کی راہ میں لڑتے ہوئے مرشد اعلیٰ کی ہدایت پر ہم ان تمام عراقی قیدیوں کو ہلاک کر دیں جو جنگ کے نتیجے میں ایرانی فوج کے گرفتار کر لیے تھے۔

انٹرنیٹ پر پوسٹ اس متنازع بیان میں کڑی تنقید کی جا رہی ہے۔ سماجی کارکنوں اور انسانی حقوق کی تنظیموں نے قاضی بور کے بیان کو جنگی جرم کا اعتراف قرار دیتے ہوئے مطالبہ کیا ہے کہ اس بیان کی تحقیقات کے لیے عالمی قوانین کو حرکت میں آنا چاہیے۔

خواتین کے سیاست میں حصہ لینے کی مخالفت

شدت پسند عراقی رکن پارلیمنٹ نادر قاضی بور نے اپنی تقریر میں خواتین کے رکن پارلیمنٹ بننے پر بھی سخت برہمی کا اظہار کرتے ہوئے ان کے حوالے سے نازیبا الفاظ استعمال کئے ہیں۔ خواتین کو مخاطب کرکے وہ کہتے ہیں کہ ’پارلیمنٹ خواتین کی جگہ نہیں۔ اگر لوگ آپ کو پارلیمنٹ کے رکن منتخب کرتے ہیں تو وہ تمہیں آزمائش میں ڈال رہے ہیں‘۔

نادر قاضی نے حال ہی میں پارلیمانی انتخابات میں 14 خواتین کی بہ طور رکن پارلیمنٹ کامیابی پر سخت برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ پارلیمنٹ صرف مردوں کی جگہ ہے۔ یہاں خواتین کا کیا کام ہے، کیا ہم اب خواتین کے ساتھ بحث ومباحثہ کریں گے۔

سوشل میڈیا پر نادر قاضی بورکے اس متنازع بیان پر سخت رد عمل بھی سامنے آیا ہے۔ بنیاد پرست عناصر نے ان کی حمایت کی ہے مگر اعتدال پسند کارکنوں نے مطالبہ کیا ہے کہ نادر قاضی کے بیانات کے بعد وہ خود بھی رکن پارلیمنٹ کا حق کھو چکے ہیں۔ پارلیمنٹ کو چاہیے کہ انہیں تحفظ نہ دے بلکہ ان کے خلاف کارروائی شروع کرے۔