.

ایران اورترکی شام میں جنگ بندی کے حامی : حسن روحانی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایرانی صدر حسن روحانی نے کہا ہے کہ ان کا ملک اور ترکی دونوں ہی شام میں جنگ بندی اور اس کی علاقائی سالمیت برقرار رکھنے کے حامی ہیں۔

حکومت نواز روزنامہ ایران میں اتوار کو شائع شدہ ایک رپورٹ کے مطابق صدر روحانی نے کہا ہے کہ ''دونوں ملکوں کے درمیان جنگ کو روکنے اور بے گھر افراد تک امدادی سامان پہنچانے میں کوئی اختلاف نہیں پایاجاتا ہے''۔

انھوں نے یہ باتیں ایران کے دورے پر آئے ہوئے ترک وزیراعظم احمد داؤد اوغلو سے گفتگو کرتے ہوئے کہی تھیں۔واضح رہے کہ شام میں جاری تنازعے کے معاملے میں ایران اور ترکی بالکل متضاد مؤقف کے حامل ہیں۔

ترکی شامی صدر بشارالاسد کے دھڑن تختے کے لیے مسلح جدوجہد کرنے والے باغیوں کا حامی ہے اور وہ بحران کے حل کے لیے بشارالاسد کی اقتدار سے رخصتی کا مطالبہ کرتا چلا آرہا ہے جبکہ ایران اور روس شامی صدر کے زبردست مؤید اور حامی ہیں۔ایرانی فوجی کانڈر اور تربیت یافتہ ملیشیائیں شامی فوج کے شانہ بشانہ باغی جنگجوؤں کے خلاف لڑرہے ہیں اور روس کے لڑاکا طیارے شام میں داعش اور دوسرے باغی گروپوں کے خلاف فضائی حملے کررہے ہیں۔