.

دوابشہ کیس کے واحد فلسطینی عینی شاہد کا گھر بھی نذر آتش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مغربی کنارے کے شہر نابلس کے جنوب میں واقع علاقے دوما میں نامعلوم افراد نے اتوار کی صبح ایک فلسطینی شہری کے گھر کو آگ لگادی.. یہ گھر فلسطینی شہری ابراہیم محمد کا ہے.. جو گزشتہ سال اسی علاقے میں یہودی آبادکاروں کے ہاتھوں فلسطینی شہری سعد دوابشہ کے گھر کو نذر آتش کیے جانے کے کیس میں واحد عینی شاہد ہے۔

مغربی کنارے کے شمال میں یہودی بستیوں کے معاملے کے ذمے دار غسان دغلس نے سرکاری نیوز ایجنسی (وفا) کو بتایا کہ فلسطینی شہری ابراہیم محمد دوابشہ کا گھر آگ لگائے جانے کی وجہ سے جل کر خاکستر ہوگیا.. جس کے نتیجے میں گھر کا مالک اور اس کی بیوی دم گھٹنے سے زخمی ہوگئے۔

ذمہ دار کے مطابق یہ کارروائی بھی یہودی آبادکاروں کی جانب سے کی گئی ہے.. اور یہ اسی طریقے پر عمل میں لائی گئی جس طرح گزشتہ اگست میں سعد دوابشہ کے گھر کو نذر آتش کیا گیا تھا۔

دغلس نے واضح کیا کہ ابراہیم دوابشہ کو ماضی میں دھمکیاں اور انتباہات مل چکے تھے.. انہوں نے باور کرایا کہ حادثے کی وجوہات جاننے کے لیے تحقیقات جاری ہیں۔