.

النصرۃ محاذ نے شامی طیارہ مار گرایا، پائیلٹ گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام میں جنگجوؤں نے شمالی شہر حلب کے جنوب میں صدر بشارالاسد کی فوج کا ایک طیارہ مار گرایا ہے اور اس کے پائیلٹ کو گرفتار کر لیا ہے۔

برطانیہ میں قائم شامی رصدگاہ برائے انسانی حقوق نے اطلاع دی ہے کہ شامی طیارے کو دوران پرواز ہی آگ لگ گئی تھی اور وہ تل العیس کے علاقے میں گر کر تباہ ہوگیا ہے۔اس علاقے میں القاعدہ سے وابستہ النصرۃ محاذ کے جنگجوؤں پر شامی اور روسی طیاروں نے شدید بمباری کی تھی۔انھوں نے اسی ہفتے اس علاقے پر قبضہ کیا تھا۔

شام کے سرکاری ٹیلی ویژن نے واقعے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس جیٹ پر زمین سے فضا میں مار کرنے والے میزائل داغا گیا ہے اور پائیلٹ اس سے نیچے کود گیا تھا۔

لیکن شامی رصدگاہ اور جنگجوؤں کے ایک ذریعے نے بتایا ہے کہ تباہ شدہ طیارے کے پائیلٹ کو النصرۃ محاذ نے پکڑ لیا ہے اور اس کو اپنے ایک ہیڈ کوارٹرز میں منتقل کردیا ہے۔سوشل میڈیا پر اس تباہ شدہ لڑاکا طیارے کے ملبے کی تصاویر اور فوٹیج جاری کی گئی ہے۔اس کے ارد گرد باغی جنگجو کھڑے نظر آرہے ہیں۔

واضح رہے کہ صدر بشارالاسد کی فوج کو اپنے اتحادی روس کی بدولت باغیوں کے خلاف جنگ میں فضائی برتری حاصل ہے اور یہی فضائی قوت اس جنگ میں فیصلہ کن کردار ادا کررہی ہے۔شامی فوج اور روس کے لڑاکا طیارے باغیوں کے ٹھکانوں پر تباہ کن بمباری کرتے رہتے ہیں۔ان تباہ کن حملوں کے بعد باغی اپنے زیر قبضہ بہت سے علاقوں سے پسپا ہو چکے ہیں اور شامی فوج نے دوبارہ ان پر اپنا کنٹرول حاصل کر لیا ہے۔

شامی باغی اپنے پشتی بان ممالک سے ایک عرصے سے طیارہ شکن ہتھیار مہیا کرنے کا مطالبہ کررہے ہیں تاکہ وہ شامی فورسز کی تباہ کن بمباری کا مقابلہ کرسکیں لیکن ان کے حامی مغربی ممالک نے ابھی تک ان کا یہ مطالبہ تسلیم نہیں کیا ہے اور ان کا یہ موقف ہے کہ یہ خطرناک ہتھیار داعش یا النصرۃ محاذ کے ہاتھ لگ سکتے ہیں۔

درایں اثناء داعش کے جنگجوؤں نے ترکی کے جنوب مشرقی صوبے غازیان تیپ میں واقع ایک فوجی چوکی کی جانب گولہ باری کی ہے جس کے نتیجے میں ایک ترک فوجی معمولی زخمی ہوگیا ہے۔

ترکی کی سرحد کے نزدیک داعش اور شامی باغیوں کے درمیان لڑائی جاری ہے اور باغی داعش کے زیر قبضہ ایک قصبے الرائے کے نزدیک پہنچ گئے ہیں۔اس سے پہلے انھوں نے داعش کو متعدد دیہات سے پسپا کرکے ان پر قبضہ کر لیا ہے۔اس علاقے میں جیش الحر کے تحت مختلف باغی دھڑے داعش کے خلاف لڑرہے ہیں۔

شامی رصدگاہ کا کہنا ہے کہ باغی گروپوں نے حلب کے شمال میں واقع سولہ دیہات پر قبضہ کر لیا ہے۔داعش نے ان دیہات پر گذشتہ دو سال سے قبضہ کررکھا تھا۔شامی باغیوں کی ان فتوحات کو امریکا داعش کے خلاف جنگ میں بڑی اہمیت دے رہا ہے۔