.

یمن: عدن ایئرپورٹ پر حملہ، 4 فوجی ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں سیکورٹی ذرائع کے مطابق عدن کے ایئرپورٹ کے قریب ایک چیک پوائنٹ کے نزدیک خودکش حملہ آور نے بارود سے بھری گاڑی کو دھماکے سے اڑا دیا۔ اس کے نتیجے میں 4 فوجی ہلاک اور 2 زخمی ہوگئے۔

ذرائع نے یہ نہیں بتایا کہ دھماکے کے پیچھے کس کا ہاتھ ہے۔ تاہم گزشتہ چند ماہ کے دوران عدن میں ہونے والے حملوں اور دھماکوں میں اکثر کارروائیاں القاعدہ اور داعش تنظیموں سے منسوب کی گئیں جن میں بعض کی ذمہ داری براہ راست ان تنظیموں نے قبول بھی کی۔ واضح رہے کہ یمن کے جنوب میں القاعدہ اور داعش سمیت شدت پسند تنظیموں کے رسوخ میں اضافہ دیکھا جا رہا ہے۔

رواں سال جنوری میں نامعلوم مسلح افراد نے عدن ایئرپورٹ پر انٹیلجنس ادارے کے ذمہ دار علی صلاح الناخبی کو اس وقت ہلاک کردیا جب ان کی گاڑی عدن شہر کے وسطی علاقے المنصورہ سے گزر رہی تھی۔

واضح رہے کہ ستمبر 2014 میں صنعاء کے حوثی باغیوں اور ان کے حلیفوں کے ہاتھوں میں جانے کے بعد یمنی صدر عبد ربہ منصور ہادی نے عدن شہر کو ملک کا عارضی دارالحکومت قرار دیا تھا۔

گزشتہ موسم سرما میں سرکاری فوج نے عرب اتحادی افواج کی معاونت سے ملک کے جنوب میں 5 صوبوں کا کنٹرول باغیوں سے واپس لے لیا تھا۔

اتحادی طیاروں نے گزشہ ماہ سے عدن میں شدت پسندوں کے ٹھکانوں کو نشانہ بنانے کا آغاز کیا تھا۔

سرکاری فوج اور عوامی مزاحمت کاروں کی معزول صدر علی عبداللہ صالح کی فورسز کے ساتھ شدید جھڑپوں کے بعد عدن ایئرپورٹ کو گزشتہ سال 22 جولائی کو دوبارہ کھول دیا گیا تھا۔