.

دیما الواوی ۔۔۔ کم عمر ترین فلسطینی قیدی !

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

دیما الواوی اسرائیلی جیلوں میں قید سب سے کم عمر فلسطینی ہے۔ اپنی کم عمری کے باوجود وہ جیل کی اذیت کا مزہ پوری طرح چکھ چکی ہے۔

العربیہ نیوز چینل کی اس وڈیو میں زندگی کی 12 بہاریں دیکھ لینے والی دیما نے اپنی قید کی اور اسرائیلی جیل کی دیواروں کے درمیان گزارے گئے وقت کی تفصیلات بیان کی ہیں۔

اسرائیلیوں کے خلاف چھرا گھونپنے کی منصوبہ بندی کے الزام میں دو ماہ کی قید گزارنے والی فلسطینی بچی دیما الواوی کو اسرائیلی حکام نے اتوار کے روز رہا کر دیا تھا۔

رہائی کے بعد دیما کا اپنے گاؤں حلحول میں گرمجوشی کے ساتھ استقبال کیا گیا جو مقبوضہ مغربی کنارے میں الخلیل شہر کے قریب واقع ہے۔

اسرائیلی حکام نے دیما کو طولکرم شہر کے مغرب میں جبارہ کی چیک پوسٹ پر فلسطینی اتھارٹی کے حوالے کیا جہاں دیما کے اہل خانہ اس کے منتظر تھے۔

اسرائیلی حکام نے 9 فروری کو اسکول یونیفارم میں ملبوس دیما کو مغربی کنارے میں ایک اسرائیلی بستی کے داخلی راستے پر گرفتار کر لیا تھا اور اس کے پاس سے ایک چھرا برآمد کرنے کا دعوی کیا تھا۔

یاد رہے کہ فلسطینی اراضی میں گزشتہ اکتوبر سے چاقو اور چھرا گھونپنے کے واقعات کی ایک لہر دیکھی جارہی ہے جس کے نتیجے میں اب 28 اسرائیلی مارے جاچکے ہیں۔