.

یمن امن مشاورت میں اختلافات، کویت حرکت میں آ گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایک قدم پیچھے ایک قدم آگے.. کویت میں جاری یمنی مشاورت کا یہ کچھ حال ہے۔ باغیوں کی جانب سے متفقہ جنگ بندی کی مسلسل خلاف ورزیوں کے پیش نظر یمنی حکومت کے وفد کی جانب سے مذاکرات میں شرکت معلق کردینے کا اعلان کیا گیا تھا۔ اب اس اعلان کے چند گھنٹوں کے بعد کویت نے اختلافات ختم کرانے کے لیے اپنی کوششیں شروع کردی ہیں۔

کویتی ذرائع کے مطابق امیر کویت الشيخ صباح الاحمد الصباح نے نقطہ ہائے نظر میں قربت پیدا کرنے کے لیے پھر سے مداخلت کی ہے۔ ادھر کویتی وزیر خارجہ الشيخ صباح الخالد الصباح نے حقیقتا اقوام متحدہ کے یمن کے لیے خصوصی ایلچی اسماعیل ولد الشیخ احمد کے ساتھ مل کر اختلاف کو ختم کرنے اور پھر سے مذاکرات کی میز پر واپسی کی کوششیں شروع کردی ہیں۔

قبل ازیں حکومتی وفد نے باور کرایا تھا کہ بات چیت میں شرکت کو معلق کرنے کا فیصلہ، عمران صوبے میں یمنی فوج کے کیمپ پر حوثیوں اور ان کے حلیفوں کے قبضے کے جواب میں کیا گیا۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ شرکت کو معلق کرنے کا مطلب مشاورت سے پیچھے ہٹ جانا نہیں۔

دوسری جانب یمن کے لیے اقوام متحدہ کے خصوصی ایلچی اسماعیل ولد الشیخ احمد نے حکومتی وفد کے فیصلے کو سمجھ جانے کا اظہار کیا ہے تاہم انہوں نے تمام فریقوں پر زور دیا کہ وہ اس مشاورت میں حسن نیت اور حکمت کے ساتھ شریک ہوں جس پر یمنی عوام اعتماد کر رہے ہیں۔

ایسا نظر آتا ہے کہ اقوام متحدہ نے مشاورت جاری رکھنے اور اختلافات ختم کرنے پر فریقین کی حوصلہ افزائی کا مصمم ارادہ کر رکھا ہے تاکہ کسی ایسے حل تک پہنچا جاسکے جس پر تمام لوگ رضامند ہوں۔