.

سعودی عرب : وادی نعمان میں ہلاک دہشت گردوں کی شناخت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی وزارت داخلہ کے سیکورٹی ترجمان نے بتایا ہے کہ مکہ مکرمہ اور طائف کے درمیان واقع وادی نعمان میں دہشت گردوں کے ایک اڈے کا گھیراؤ کرلیا گیا۔ اس کے نتیجے میں وہاں موجود افراد نے سیکورٹی فورسز پر فائرنگ کردی۔ جوابی کارروائی میں دو دہشت گرد مارے گئے جب کہ دیگر دو نے بارودی بیلٹ کے ذریعے خود کو دھماکے سے اڑا کر خودکشی کرلی۔

کارروائی میں مارے جانے والوں میں محمد سلیمان العنزی شامل ہے جو متعدد تخریبی کارروائیوں کے حوالے سے مطلوب تھا۔ ان میں احساء گورنری کے ایک گاؤں دالوہ کی مصطفی مسجد میں نمازیوں پر فائرنگ، دمام شہر کی عنود مسجد میں دھماکا، قطیف گورنری میں قدیح قصبے کی امام علی بن ابی طالب مسجد میں دھماکا شامل ہیں۔ العنزی کو دھماکا خیز مواد تیار کرنے کا ماہر شمار کیا جاتا تھا۔

کارروائی میں ضرما کے دہشت گرد سیل کے مطلوب مبارک الدوسری کے علاوہ سعید عایض الشہرانی بھی مارا گیا۔ الشہرانی عسیر صوبے میں ہنگامی فورسز کی مسجد میں دھماکے، نجران صوبے میں المشہد مسجد میں دھماکے اور دو ریٹائرڈ سیکورٹی اہل کاروں کے قتل میں ملوث ہونے کے سبب سیکورٹی اداروں کو مطلوب تھا۔

سیکورٹی فورسز کی کارروائی میں ہلاک ہونے والا چوتھا دہشت گرد عادل عبدالله ابراهيم المجماج ہے جس کا تعلق بیشہ کے مقابلے میں مارے جانے والے یاسر علی الحودی سے تھا۔ المجماج بارودی بیلٹ باندھ کر خواتین کے بھیس میں نقل و حرکت کررہا تھا۔

تلاشی کے بعد

کامیاب کارروائی کے بعد دہشت گردوں کے اڈے کی تلاشی کے نتیجے میں اسلحہ اور گولہ بارود قبضے میں لے لیا گیا۔ ان میں دو بارودی بیلٹس، تاروں کے ساتھ دھماکا خیز مواد کے 15 آلات، 4 عدد کلاشنکوفیں، 2 پستولیں، گولہ بارود کی بڑی مقدار اور دو تھیلیاں شامل ہیں جن میں المونیئم پاؤڈر اور دھاتوں کے ٹکڑے موجود تھے جن کو دھماکا خیز مواد کے آلات میں بھرنے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔