.

حلب:شامی فوج اور باغیوں میں فائرنگ اور بمباری کا تبادلہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام کے شمالی شہر حلب میں اسدی فوج اور باغیوں کے درمیان جنگ بندی کے باوجود فائرنگ کا تبادلہ ہوا ہے۔ روس اور امریکا کی ثالثی میں طے پانے والی جنگ بندی کی مدت آج (بدھ کی) رات ختم ہورہی ہے۔

فرانسیسی خبررساں ادارے اے ایف پی نے اپنے نمائندے کے حوالے سے اطلاع دی ہے کہ شامی فوج کے طیاروں نے حلب کے مشرقی حصوں میں باغیوں کے ٹھکانوں پر بمباری کی ہے جس سے دو افراد زخمی ہوگئے ہیں۔منگل کی رات اسدی فوج کے لڑاکا طیاروں نے باغیوں کے زیر قبضہ دو اور علاقوں پر بمباری کی تھی۔

برطانیہ میں قائم شامی رصدگاہ برائے انسانی حقوق نے بتایا ہے کہ باغیوں نے حلب کے مغربی حصے میں حکومت کے کنٹرول والے دو علاقوں پر راکٹ برسائے ہیں۔شام کی سرکاری خبررساں ایجنسی سانا کے مطابق رات باغیوں کی فائرنگ سے ایک شخص ہلاک ہوگیا تھا۔

حلب میں دو ہفتے قبل تشدد کے واقعات میں اضافے کے بعد گذشتہ جمعرات کو مقامی سطح پر جنگ بندی ہوئی تھی۔شامی فوج اور باغیوں کے درمیان جھڑپوں اور ایک دوسرے کے علاقے پر فضائی اور زمینی حملوں میں تین سو سے زیادہ افراد ہلاک ہوگئے تھے جس کے بعد ملک کے باقی حصوں میں بھی امریکا اور روس کی ثالثی میں جاری جنگ بندی کے خاتمے کا خطرہ پیدا ہوگیا تھا۔

حلب اورشام کے دوسرے علاقوں میں باغیوں اور شامی فوج کے درمیان جنگ بندی کے بعد سے ہلاکتوں میں نمایاں کمی واقع ہوئی ہے۔اس میں عالمی سطح پر سفارتی کوششوں کے نتیجے میں دو مرتبہ توسیع کی جاچکی ہے لیکن ابھی تک یہ واضح نہیں ہے کہ آج شب جنگ بندی کی مدت ختم ہونے کے بعد اس میں کوئی توسیع کی جائے گی یا نہیں۔

امریکا اور روس نے سوموار کو اس عزم کا اظہار کیا تھا کہ وہ شام کے تمام علاقوں میں جنگ بندی اور تنازعے کے سیاسی حل کے لیے اپنی کوششیں تیز کریں گے۔اقوام متحدہ کے فراہم کردہ اعداد وشمار کے مطابق شام میں 2011ء کے وسط سے جاری خانہ جنگی کے نتیجے میں دو لاکھ ستر ہزار سے زیادہ افراد ہلاک اور چالیس لاکھ سے زیادہ دربدر ہوچکے ہیں۔