.

"جیش الاسلام، احرارالشام دہشت گرد تنظیمیں نہیں"

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے روس کی جانب سے شام کے دو باغی گروپوں جیش الاسلام اور احرارالشام کو دہشت گرد قرار دینے کی درخواست مسترد کر دی ہے۔

سلامتی کونسل میں امریکا، برطانیہ، فرانس اور یوکرین نے روسی نقطہ نظر کی مخالفت کی۔ ایک سفارتی ذریعے کے مطابق مذکورہ تنظیموں کو دہشت گرد قرار دینے کے فیصلے کا جنیوا مذاکرات پر اثر پڑنے کا امکان ہے۔ یاد رہے کہ شامی بحران کا حل تلاش کرنے کے لیے جنیوا میں مذاکرات کے دو دور ہو چکے ہیں۔ ان مذاکرات میں جیش الاسلام بھی شریک رہی ہے اور اس کے رہنما محمد علوش حزب اختلاف کی اعلیٰ مذاکراتی کمیٹی کے سربراہ ہیں۔

جیش الاسلام کو دہشت گرد قرار دینے سے متعلق فیصلہ اور اس پر پابندیاں لگانے کے لیے سلامتی کونسل کے ارکان میں اتفاق رائے ضروری ہے۔ چار اہم رکن ملکوں کی جانب سے اس فیصلے کی مخالفت سے جیش الاسلام کو روسی مطالبے پر دہشت گرد قرار نہیں دیا جا سکتا۔