شام میں ہلاک ایرانیوں کے اہل خانہ کا "کمبلوں" سے اعزاز و اکرام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایران میں نیوز ایجنسیوں کی جانب سے تصویری رپورٹوں میں شام میں مارے جانے والے پاسداران انقلاب اور ایرانی فوجی اہل کاروں کے اہل خانہ کے اعزاز و اکرام کی تقریب کا احوال بتایا گیا ہے۔ تقریب میں ریاست کی فوجی قیادت اور ذمہ داران کی موجودگی میں ہلاک شدگان کے خاندانوں کو تحفے کے طور پر کمبل دیے گئے۔ اس اقدام سے ایرانی عوام میں اور سوشل میڈیا پر تضحیک کی لہر دوڑ گئی۔

تقریب کا اہتمام دارالحکومت تہران کے وسط میں ایک سرکاری ہال میں کیا گیا تھا۔ شام میں صدر بشار الاسد کی حکومت کی خاطر جان کا نذرانہ پیش کرنے والوں کے اہل خانہ یہ دیکھ کر حیران رہ گئے کہ ان کا اعزاز و اکرام "فی خاندان ایک کمبل" کے ذریعے کیا جا رہا ہے۔

اس اقدام پر تہران حکومت کے حامیوں نے بھی کڑی نکتہ چینی کی۔ ایرانی میڈیا پرسن حسن شمشادی نے جو شام میں ایرانی براڈکاسٹنگ کارپوریشن کے بیورو کے ڈائریکٹر بھی اس پروگرام کو "منتظمین کے لیے باعث عار اور شرمناک" قرار دیا۔

شمشادی کا کہنا ہے تھا کہ "ایرانیوں پر اس تقریب کے منفی نتائج ہوں گے"۔ انہوں نے باور کرایا کہ ان افراد نے "بہت بڑی قربانی دی ہے" اور ان کو "کمبل کی کوئی حاجت نہیں"۔

دوسری جانب ایران کی جانب سے ہلاک شدگان کے اعزاز و اکرام کا شامی حکومت کے اسی نوعیت کے اقدام سے موازنہ کیا جا رہا ہے۔ کچھ عرصہ قبل شامی حکومت کی جانب سے اپنے ہلاک افراد کے اکرام کے سلسلے میں ہر متاثرہ خاندان کو دیوار پر آویزاں کرنے والی گھڑی اور اس کی بیٹری اور ایک عدد بکری سے نوازا گیا تھا۔ یہ ہی نہیں بلکہ اس سے قبل شامی حکومت نے ہلاک ہونے والے افراد کے اہل خانہ کو بشار الاسد کی تصویر تحفے میں دینے کا ارادہ کیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں