ایران: مغرب کے ساتھ معمول کے تعلقات پر پاسداران کی دھمکی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایران میں پاسداران انقلاب کے کمانڈر محمد علی جعفری نے (نام لیے بغیر اصلاح پسندوں کی جانب اشارہ کرتے ہوئے) مغرب کے ساتھ معمول کے تعلقات کے خواہاں عناصر کو دھمکی دیتے ہوئے کہا ہے کہ "پاسداران انقلاب کی فورسز اور باسیج ملیشیا ایرانی نظام کی جڑوں میں مغربی رسوخ کو ہرگز داخل نہیں ہونے دیں گی"۔

فارس نیوز ایجنسی کے مطابق جعفری نے "امام حسين" کیڈٹ کالج میں خطاب کرتے ہوئے کہا کہ "پاسداران انقلاب نظام اور انقلاب کے نظریے کا دفاع جاری رکھیں گے اور امریکی نواز منحرف گروپوں کو انقلاب کی خلاف ورزی کی اجازت نہیں دیں گے"۔

پاسداران انقلاب کے کمانڈر نے عرب ممالک میں ایرانی عسکری مداخلت، دہشت گردی کی سپورٹ اور خطے کے استحکام کو متزلزل کرنے کو مسترد کیے جانے کے سبب اسلامی تعاون تنظیم کو بھی شدید تنقید کا نشانہ بنایا۔

جعفری سے قبل ایرانی مرشد اعلی علی خامنہ ای نے اپنے خطاب میں باور کرایا کہ پاسداران انقلاب کی مرکزی ذمہ داری "انقلاب کا تحفظ" ہے۔ خامنہ ای کے نزدیک "مغرب کی جانب سے نیوکلیئر توانائی، میزائل تجربات اور انسانی حقوق جیسے موضوعات اٹھانے کا مقصد محض ایران میں رسوخ حاصل کرنا ہے"۔

دوسری جانب حزب اختلاف کی سبز تحریک کے زیرانتظام ویب سائٹ "كلمہ" کے مطابق جعفری کے یہ دھمکی آمیز بیانات کارکنان، دانش وروں، شعراء اور صحافیوں کے خلاف اُس سیکورٹی مہم کی ایک کڑی ہے، جس کا آغاز نیوکلیئر معاہدے کی کامیابی کے بعد کیا گیا۔

ویب سائٹ کا کہنا ہے کہ اس مرتبہ کی نکتہ چینی میں "نیوکلیئر معاہدے کے بعد مغربی رسوخ" کے تحت صدر روحانی کی حکومت کو نشانہ بنایا جا رہا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں