.

روس انسداد دہشت گردی میں کردار ادا کرسکتا ہے : سعودی عرب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی وزیر خارجہ عادل الجبیر کا کہنا ہے کہ "خلیج تعاون کونسل کے ممالک اور روس آپس میں تاریخی روابط اور مشترکہ مفادات" رکھتے ہیں۔ انہوں نے یہ بات ماسکو میں اپنے روسی ہم منصب سرگئی لاؤروف کے ساتھ ایک پریس کانفرنس میں کہی۔

الجبیر کا کہنا تھا کہ " ہم ممالک کی خودمختاری کے احترام اور ان کے امور میں عدم مداخلت کے حوالے سے روس کے موقف کی قدر کرتے ہیں"۔

سعودی وزیر خارجہ نے باور کرایا کہ خلیج تعاون کونسل کے ممالک اور روس کے وزراء خارجہ کے درمیان اجلاس فائدے مند رہا جس میں جانبین کے درمیان کوآرڈی نیشن اور مشاورت کو فعال بنانے پر اتفاق رائے بھی ہوا۔ الجبیر نے زور دے کر کہا کہ روس خطے میں انسداد دہشت گردی اور بحرانوں کا مقابلہ کرنے میں کردار ادا کرسکتا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ " ہم روس کے ساتھ خطے کو درپیش چیلنجوں کا مقابلہ کرنے کے لیے کام کررہے ہیں"۔

انہوں نے کہا کہ "خلیج تعاون کونسل کے ممالک مسئلہ فلسطین کے حوالے سے روس کے موقف کو گراں قدر جانتے ہیں"

دوسری جانب روسی وزیر خارجہ کا کہنا ہے کہ "ہم نے سعودی وزیر خارجہ کے ساتھ متعدد علاقائی معاملات پر بات چیت کی ہے۔ اس دوران ہمارے بیچ قانونی بنیاد پر خطے کے مسائل حل کرنے کی ضرورت پر بھی اتفاق رائے سامنے آیا۔ اس کے علاوہ شام ، عراق اور لیبیا میں بحرانوں کے حل کے لیے کی جانے والی کوششیں اور خلیج کی صورت حال زیر بحث آئی"۔

لاؤروف نے مزید کہا کہ "ہم نے باور کرایا ہے کہ شام کے بحران کے حل کے لیے جاری کوششوں کے لیے بھرپور سپورٹ جاری رکھیں گے"۔

روسی وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ ان کا ملک سعودی عرب کے زیرقیادت اسلامی عسکری اتحاد کی تشکیل کا خیرمقدم کرتا ہے۔ انہوں نے تیل اور نیوکلیئر توانائی کے شعبوں میں سعودی عرب کے ساتھ تعاون کی ضرورت پر زور دیا۔