.

حزب اللہ کے وزراء اور ارکان پارلیمنٹ کو تنخواہوں کی نقد ادائیگی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

حزب اللہ کو مالی رقوم کی فراہمی سے متعلق امریکا کی جانب سے جاری ہونے والے قانون Hizballah International Financing Prevention Act (HIFPA) کا حال ہی میں اطلاق شروع ہوگیا ہے تاہم لبنان کا مرکزی بینک وضاحتی نوٹفکیشنز جاری کرنے کے بعد بھی اس پر عمل درامد میں کامیاب نہیں ہوسکا ہے۔

دہشت گردی کے لیے مالی رقوم کے امور سے متعلق امریکی وزیر خزانہ کے معاون ڈینیئل گلائزر نے لبنان کے دورے میں مقامی حکام پر زور دیا ہے کہ وہ حزب اللہ پر پابندیوں سے متعلق امریکی قانون پر عمل درامد کو یقینی بنائیں۔ انہوں نے باور کرایا کہ اس قانون میں تنظیم کے تمام ارکان یہاں تک کہ وزراء اور ارکان پارلیمنٹ بھی شامل ہیں، جس سے اس بات کی تصدیق ہوجاتی ہے کہ امریکا متعدد یورپی ممالک کے برخلاف جن میں فرانس سرفہرست ہے حزب اللہ کے عسکری اور سیاسی ونگ میں کوئی فرق نہیں کرتا۔

بیروت میں امریکی سفارت خانے کی جانب سے جاری بیان کے مطابق گلائیزر نے جمعرات اور جمعہ کے روز لبنان کا دورہ کیا اور اس دوران سیاسی ذمہ داران اور اعلی سطح کے بینکاروں کے ساتھ ملاقاتیں بھی کیں۔

تںخواہوں کی نقد ادائیگی

اسی سیاق میں عربی روزنامے "الشرق الاوسط" نے حزب اللہ کے پارلیمانی ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ تنظیم سے تعلق رکھنے والے وزراء اور ارکان پارلیمنٹ کو دو ماہ سے اپنے دیگر ساتھیوں کے برخلاف تنخواہوں کی نقد ادائیگی کی جارہی ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ ارکان پارلیمنٹ اور وزراء کے خلاف کیے گئے اقدامات مسئلہ نہیں ہیں بلکہ بنیادی مسئلہ وہ غیر تنظیمی عناصر ہیں جنہوں نے کام کے ماحول کو یرغمال بنا رکھا ہے جب کہ یہ لوگ حزب اللہ کے زیرانتظام طبی، تعلیمی، سماجی اور میڈیا کے اداروں میں کام کرتے ہیں۔

قرضوں کی ادائیگی کرنے والوں کے ساتھ معاملہ

اخبار نے اپنے ذرائع کی بنیاد پر بتایا ہے کہ متعدد امریکی ماہرین نے لبنانی مرکزی بینک میں "خصوصی تحقیقاتی کمیٹی" کے ارکان کو عملی تربیت دینے کا آغاز کردیا ہے۔ اس تربیت کا مقصد حزب اللہ پر پابندیوں سے متعلق امریکی قانون پر عمل درامد کا طریقہ کار کی نوعیت سے آگاہ کرنا ہے۔ ذرائع کے مطابق لبنانی بینکوں کو درپیش ایک بنیادی دقت طلب مسئلہ یہ ہے کہ "ان صارفین کے ساتھ کس طرح معاملہ کیا جائے جو قرضے کی ادائیگی اور ان پر پابندیاں بھی عائد ہیں۔ اس لیے کہ ان میں اکثریت اس مدت کے اندر قرضوں کی پوری ادائیگی نہیں کرسکتی جو بینکوں کے ساتھ پیشگی معاہدوں میں مقرر کی گئی تھی جب کہ یہ بینک بھی اپنی رقوم حاصل کیے بنا ان افراد کے ساتھ لین دین کو روک دینے کے متحمل نہیں ہوسکتے ہیں"۔ یاد رہے کہ کچھ عرصہ قبل لبنان کے مرکزی بینک میں "خصوصی تحقیقاتی کمیٹی" نے ملکی بینکوں کو جاری نوٹفکیشن میں امریکی پابندیوں کے قانون پر عمل درامد کی نوعیت کی وضاحت کی تھی۔