.

عرب اتحاد کا نجران میں حوثیوں کَے حملوں کا منہ توڑ جواب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں حوثی باغیوں اور سعودی عرب کے درمیان سرحد پر دو ماہ سے جاری عارضی سیز فائرکی خلاف ورزیوں کے بعد عرب اتحاد اور سعودی فورسز نے یمنی باغیوں کے راکٹ حملوں کا منہ توڑ جواب دیا ہے۔ اطلاعات ہیں کہ جمعہ اور ہفتہ کی درمیانی شب عرب اتحادی فورسز اور سعودی عرب کے تو پخانے نے نجران کے علاقے میں حوثی باغیوں کے ٹھکانوں پر بھرپور حملے کیے ہیں۔

یہ پہلاموقع نہیں کہ حوثی باغیوں نے سعودی عرب کی سلامتی کو چیلنج کرتے ہوئے جنگ بندی کی خلاف ورزی کی اور گنجان آباد علاقوں پر راکٹ حملے شروع کیے ہیں۔ گذشتہ سوموار کو بھی یمنی باغیوں کی جانب سے نجران کے علاقے میں ایک بیلسٹک میزائل داغا گیا تھا، تاہم اسے سعودی فورسز نے فضاء ہی میں تباہ کر دیا تھا۔

اطلاعات کے مطابق سعودی عرب اور یمن میں آئینی حکومت کی بحالی میں سرگرم عرب اتحاد کے جنگی طیارے حوثیوں کی طرف سے کسی بھی قسم کی جارحیت کا منہ توڑ جواب دینے کے لیے ہمہ وقت تیار ہیں۔ حوثیوں کی طرف سے سعودی عرب کے سرحدی علاقے پر راکٹ حملے کی کوشش کی گئی تھی، جس کے رد عمل میں سعودی توپخانے اور عرب اتحاد کے جنگی طیاروں نے حوثیوں کے ٹھکانوں پر تابڑ توڑ حملے کیے ہیں۔

نجران کے مقامی ذرائع کا کہنا ہے کہ حوثی باغیوں کی طرف سے شمالی صنعاء کے ھمدان ڈاریکٹوریٹ کے قاع الراقی کے مقام سے راکٹ داغے گئے تھے۔ اس علاقے سے یمن کے اندر حکومتی فورسز کے ٹھکانوں پر بھی جنگ بندی کے عرصے کے دوران باغیوں کی طرف سے تین میزائل حملے کیے جا چکے ہیں۔