.

شامی سرحد کے نزدیک کاربم دھماکا، 6 اردنی فوجی ہلاک

شاہ عبداللہ دوم کا خودکش حملے میں ملوّث افراد سے آہنی ہاتھوں سے نمٹنے کا عزم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اردن میں شام کی سرحد کے نزدیک واقع علاقے میں ایک خودکش کار بم دھماکے میں چھے اردنی محافظ ہلاک اور چودہ زخمی ہوگئے ہیں۔اردن کے شاہ عبداللہ دوم نے اس حملے میں ملوّث افراد سے آہنی ہاتھوں سے نمٹنے کا عزم ظاہر کیا ہے۔

سرحدی علاقے میں دہشت گردی کے اس واقعے کے بعد اردن کی مسلح افواج کے سربراہ نے ملک کی شام کے ساتھ واقع شمالی اور شمال مشرقی سرحدوں کو بند فوجی علاقہ قرار دے دیا ہے اور یہ حکم فوری طور پر نافذ العمل ہوگیا ہے۔

قبل ازیں منگل کو علی الصباح اردن ،عراق اور شام کے سرحدی سنگم کے نزدیک واقع غیرآباد علاقے میں ایک خودکش بمبار نے اردنی فوج کی ایک چوکی پر اپنی بارود سے بھری کار کو دھماکے سے اڑادیا۔یہ فوجی چوکی الرقبان شہر کے نواح میں شامی مہاجرین کے ایک کیمپ سے چند سو میٹر کے فاصلے پر واقع ہے۔

اردن کے سرکاری ٹیلی ویژن نے واقعے کو دہشت گردی کا بزدلانہ حملہ قراردیا ہے۔فوری طور پر کسی گروپ نے اس حملے کی ذمے داری قبول نہیں کی ہے۔