.

حوثی بھی اسرائیلی روش پر.. صنعاء میں 5 گھر دھماکے سے تباہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں باغی حوثی ملیشاؤں نے منگل کی شام صنعاء کے شمال مشرق میں واقع ضلع نہم میں 5 گھروں کو دھماکے سے تباہ کردیا۔ عوامی مزاحمت کاروں کے ذرائع نے بتایا ہے کہ مذکورہ واقعہ النفاخ بنی فرج گاؤں میں پیش آیا۔

حوثی ملیشیاؤں کی جانب سے عموما سرکاری فوج یا عوامی مزاحمت کاروں کی قیادت کے گھروں کو بطور انتقام دھماکے سے تباہ کیا جاتا ہے۔ یہ وہ ہی طریقہ کار ہے جو قابض اسرائیلی فوج فلسطینی مزاحمت کاروں کے خلاف انتقامی کارروائی میں اپناتی ہے۔

اس سے قبل حوثی ملیشیاؤں کی جانب سے نہم قصبے میں متعدد گھروں کو دھماکے سے تباہ کیا جاچکا ہے۔ تزویراتی اہمیت رکھنے والے قصبے میں سرکاری فورسز کی پیش قدمی کے بیچ ان دنوں شدید جھڑپوں کی اطلاعات ہیں۔

اعداد و شمار سے متعلق رپورٹوں کے مطابق حوثیوں کی جماعت نے دو سال کے دوران متعدد صوبوں میں تقریبا 500 سے زیادہ گھروں کو دھماکوں سے اڑایا۔

ان میں سب سے پہلا گھر 2014 کے وسط میں عمران صوبے کے ضلعے خمر میں تباہ کیا گیا۔ یہ گھر حاشد قبیلے کے مرحوم سردار الشیخ عبداللہ بن حسین الاحمر کا تھا۔

مبصرین کے نزدیک حوثیوں ملیشیاؤں کی جانب سے اپنے مخالفین کے گھروں کو دھماکے سے تباہ کرنے کے نتیجے میں یمنیوں کے اندر شدید اشتعال پیدا ہوگیا ہے۔

ان مبصرین کے خیال میں حوثی ملیشیاؤں کی جانب سے جو کچھ کیا جارہا ہے اس کے بعد مخالفین کے اندر اس ضرورت کا یقین مزید مضبوط ہوگا کہ یمن کی سرزمین کے اندر سے اس گندے پھوڑے کا مکمل طور پر خاتمہ کیا جائے۔