.

شام : منبج میں محصور شہریوں کے لیے محفوظ گزرگاہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام کے شہر منبج میں سیریئن ڈیموکریٹک فورسز ، محصور شہریوں کے لیے محفوظ گزرگاہیں کھولنے میں کامیاب ہوگئی ہیں۔ ڈیموکریٹک فورسز منبج میں ایک ماہ سے داعش تنظیم کے خلاف لڑ رہی ہیں۔

اس موقع پر بے گھر ہوجانے والے اور داعش کی گرفت سے نجات حاصل کرنے والے شہریوں نے خوشی کا اظہار کرتے ہوئے کالے پرچموں اور ان کپڑوں کو نذرآتش کیا جن کو پہننے کے لیے داعش تنظیم انہیں مجبور کرتی تھی۔

سیریئن ڈیموکریٹک فورسز کی جانب سے محفوظ گزرگاہوں کے کھولے جانے کی کارروائی ، داعش کی جانب سے پھیلائی گئی ان افواہوں کے بیچ سامنے آئی ہے جن میں تنظیم نے امریکی حمایت یافتہ فورسز کی پسپائی اور منبج میں پیش قدمی سے روک دینے کا دعوی کیا تھا۔

سوشل میڈیا پر نشر کیے جانے والے وڈیو کلپوں میں سیریئن ڈیموکریٹک فورسز کے جنجگوؤں کی منبج کے جنوب میں واقع علاقے صوامع الغلال کی جانب پیش قدمی دکھائی گئی ہے۔ اتحادی افواج کے طیاروں کے حملوں کے بعد مذکورہ علاقے میں لڑائی بنیادی صورت میں جاری ہے۔

اسی طرح ڈیموکریٹک فورسز نے منبج میں زیرکنٹرول آنے والے تمام گھروں کو داعش کے جنگجوؤں سے کلیئر کرانے کی کارروائی شروع کر دی۔ اس دوران کرد ذمہ داران نے شہر پر دھاوا بولنے کی کارروائی کے سست ہونے کی تصدیق کے ہے۔ اس کی وجہ منبج میں داعش کے ہاتھوں سے نکل جانے والے علاقوں میں نشانہ باز جنگجو اور شدت پسندوں کی جانب سے نصب کی گئی بارودی سرنگیں ہیں۔