.

عراق میں 560 امریکی فوجی بھجوانے کی منظوری

اضافی کمک بھجوانے کا مقصد داعش کے خلاف جنگ میں بغداد کی معاونت کرنا ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی وزیر دفاع آشٹن کارٹر نے کہا ہے کہ عراق کے موصل شہر کو شدت پسند گروپ دولت اسلامی ’داعش‘ سے آزاد کرانے کے لیے جاری آپریشن میں عراقی فوج کی معاونت کے لیے 560 اضافی امریکی فوجی جلد بغداد روانہ کیے جائیں گے۔

العربیہ ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق مزید پانچ سو ساٹھ امریکی فوجیوں کی بغداد آمد کے بعد عراق میں موجود امریکی فوجیوں کی تعداد 4600 ہوجائے گی۔ اس سے قبل عراق میں موجود امریکی فوجی عراقی فوج کی عسکری تربیت اور جنگی امور میں صلاح مشورے میں سرگرم عمل ہیں۔

امریکی وزیرفاع آشٹن کارٹر آج سوموار کو علی الصباح اچانک ایک روزہ دورے پر بغداد پہنچے تھے، جہاں انہوں نے عراقی سیاسی اور عسکری قیادت کے ساتھ داعش کے خلاف جاری جنگ سےمتعلق امور پرتبادلہ خیال کیا ہے۔

امریکا کی زیادہ توجہ موصل کے قریب اہم فوجی اڈے کو داعش سے چھڑانے پرمرکوز ہے۔ یہی وجہ ہے کہ واشنگٹن نے بغداد کو مزید فوجی کمک بھجوانے کا اعلان کیا ہے۔

قبل ازیں ہفتے کے روز عراقی فوج نے جنوبی موصل سے 60 کلو میٹر دور القیارہ فوجی اڈے کو داعش کے قبضے سے چھڑانے کا اعلان کیا تھا۔ موصل عراق کا داعش کے قبضے میں سب سے بڑا شہر ہے اور اسے شدت پسندوں سے چھڑانے کے لیے عراقی فوج آپریشن کا سلسلہ جاری رکھے ہوئے ہے۔

عراقی حکام کے مطابق امریکی وزیردفاع آشٹن کارٹر وزیراعظم حیدر العبادی، اپنے عراقی ہم منصب خالد العبیدی، اتحادی فوج کے سربراہ لیفٹننٹ جنرل شونماکفرلانڈ اور دیگر حکام کے ساتھ بھی ملاقات کریں گے۔