.

شامی فوج کے حلب پر تباہ کن فضائی حملے ،18 شہری ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام کے دوسرے بڑے شہر حلب میں ہفتے کے روز اسدی فوج کے باغیوں کے زیر قبضہ دو علاقوں پر تباہ کن فضائی حملوں میں اٹھارہ شہری ہلاک اور متعدد زخمی ہوگئے ہیں۔

برطانیہ میں قائم شامی رصدگاہ برائے انسانی حقوق نے اطلاع دی ہے کہ حلب کے قدیم حصے میں واقع علاقے باب النصر میں نصف شب کے بعد فضائی حملوں میں چار بچوں سمیت گیارہ شہری مارے گئے ہیں اور ایک کم سن بچے سمیت سات شہری فردوس کے علاقے میں جاں بحق ہوئے ہیں۔

قبل ازیں شامی طیاروں نے ملک کے مشرق میں واقع داعش کے زیر قبضہ علاقوں پر بمباری کی تھی اور دیرالزور شہر سے قریباً تیس کلومیٹر جنوب مشرق میں واقع علاقے پر ان حملوں میں گیارہ افراد ہلاک ہوگئے تھے۔

شام کی سرکاری خبررساں ایجنسی سانا نے اطلاع دی ہے کہ سرکاری طیاروں نے داعش کی دو جگہوں کو تباہ کردیا ہے۔وہاں اسلحہ اور فوجی آلات ذخیرہ کیے گئے تھے۔ واضح رہے کہ داعش کے جنگجو پورے صوبے دیرالزور پر قبضے کے لیے جنگ آزما ہیں۔ابھی دارالحکومت کے ایک حصے اور ایک فوجی اڈے پر اسدی فوج نے اپنا کنٹرول برقرار رکھا ہوا ہے۔

داعش نے دیرالزور شہر کے جنوب میں واقع علاقے میں جمعرات کو شامی فضائیہ کا ایک مِگ لڑاکا طیارہ مار گرایا تھا۔واقعے میں طیارے کا پائیلٹ ہلاک ہوگیا تھا۔داعش کا کہنا ہے کہ اس طیارے نے متعدد دیہات پر بمباری کی تھی اور اس کے بعد اس کو مار گرایا گیا تھا۔اپریل کے بعد داعش کے جنگجو شامی فوج کے دو طیاروں اور دو ہیلی کاپٹروں کو تباہ کرچکے ہیں۔