امریکی سی آئی اے متحدہ شام کے مستقبل کے بارے میں ناامید

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکا کی سنٹرل انٹیلی جنس ایجنسی کے ڈائریکٹر جان برینان نے شام کے مستقبل کے بارے میں مایوسی کا اظہار کردیا ہے۔ان کا کہنا ہے :'' میں نہیں جانتا شام دوبارہ اکٹھے ہوسکے گا یا نہیں''۔

برینان سالانہ ایسپن سکیورٹی فورم میں گفتگو کررہے تھے۔جنگ زدہ شام کے بارے میں امریکا کے کسی اعلیٰ عہدے دار نے پہلی مرتبہ اس طرح یہ تسلیم کیا ہے کہ شام شاید گذشتہ پانچ سال سے جاری خانہ جنگی میں اپنا وجود برقرار نہ رکھ سکے۔

واضح رہے کہ سی آئی اے کے سربراہ نے چند ماہ قبل اسی طرح کے ایک سکیورٹی فورم پر گفتگو کرتے ہوئے کہا تھا کہ ''جس مشرق وسطیٰ کو ہم جانتے تھے،وہ اب قصہ پارینہ ہوچکا''۔

ادھر شام کے شمال مغربی صوبے ادلب میں ایک عالمی تنظیم ''سیو دا چلڈرن'' کی مدد سے چلنے والے ایک زچہ وبچہ اسپتال پر فضائی بمباری کی گئی ہے جس سے متعدد افراد ہلاک اور زخمی ہوئے ہیں اور عمارت کو شدید نقصان پہنچا ہے۔

برطانیہ میں قائم شامی رصدگاہ برائے انسانی حقوق کا کہنا ہے کہ باغیوں کے زیر قبضہ قصبے کفر تخارم میں واقع اسپتال کی عمارت کو فضائی حملے میں شدید نقصان پہنچا ہے اور وہ اب طبی سہولتیں مہیا کے قابل نہیں رہا ہے۔

تاہم رصدگاہ نے یہ نہیں بتایا ہے کہ یہ فضائی حملہ شامی فوج کے طیاروں نے کیا ہے یا اس کے اتحادی روس کے طیاروں نے اسپتال پر بمباری کی ہے۔اس وقت شامی فوج اور روس کے لڑاکا طیارے ادلب اور پڑوسی صوبے حلب میں داعش اور دوسرے جنگجو گروپوں پر فضائی حملے کررہے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں