سعودی یمن سرحد پر حوثی کمانڈر سمیت 40 جنگجو ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

سعودی یمنی سرحد پر مملکت کے صوبے نجران کے گاؤں شرفہ کے مقابل علاقے میں سعودی فوج نے اتحادی طیاروں کی معاونت سے ایک کارروائی کی۔ کارروائی کے نتیجے میں حوثی اور معزول صالح کی ملیشیاؤں کے 40 سے زیادہ ارکان مارے گئے جن میں ایک کمانڈر بھی شامل ہے۔ اس کے علاوہ ملیشیاؤں کی متعدد گاڑیاں بھی تباہ کردی گئیں۔

دوسری جانب عرب اتحاد کے طیاروں نے صنعاء میں حوثی اور صالح ملیشیاؤں کے ٹھکانوں اور کیمپوں پر نئے حملے کیے ہیں۔ اس دوران جبل نہدین ، السواد ، الحفا اور صباحہ کے عسکری کیمپوں کو نشانہ بنانے کے علاوہ الدیلیمی کے فضائی اڈے اور جبل عطان میں اسلحے کے ذخیروں پر بمباری کی گئی۔

ذرائع کے مطابق فضائی حملوں میں نہم گورنری میں بھی حوثی اور صالحی ملیشیاؤں کے مجمعوں کو نشانہ بنایا گیا جہاں گھمسان کی لڑائی جاری ہے۔ یمن کی سرکاری فوج اور عوامی مزاحمت کار النعیمات کے تزویراتی مقام کا کنٹرول سنبھالنے میں کامیاب ہو گئے۔ یہ پیش رفت ملیشیاؤں کے فرار ہونے کے بعد سامنے آئی جس کے عناصر وہاں شہریوں کے گھروں میں مورچہ بند تھے۔ اس دوران اسلحے اور گولہ بارود کا بڑا ذخیرہ بھی برآمد کرلیا گیا۔

ادھر صعدہ میں اتحادی فوج کے فضائی حملے میں حوثی کمانڈر شاجع صالح معوض الکبسی اپنے ایک بھائی اور دو ساتھیوں سمیت ہلاک ہوگیا۔ الکبسی کو سعودی صوبے نجران کے مقابل یمن کے علاقے میں حوثی ملیشیاؤں کا ذمہ دار سمجھا جاتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں