شام:امریکی جنگی جہاز حسکہ میں کردوں کی مدد کےلیے تیار

شامی فوج کی وحشیانہ بمباری کے بعد شہر سے ہزاروں افراد کی نقل مکانی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

امریکی محکمہ دفاع (پینٹاگان) نے بتایا ہے کہ امریکا کی قیادت میں سرگرم عالمی اتحادی فوج نے شام کے شہر الحسکہ میں کرد فورسز کی معاونت اور اس کے دفاع کے لیے جنگی طیارےاور فوجی مشیر روانہ کردیے ہیں۔ دوسری جانب اتحادی طیاروں نے الحسکہ میں اسدی فوج کے مراکز پر بمباری بھی کی ہے۔

العربیہ نیوز چینل کی رپورٹ کے مطابق امریکی محکمہ دفاع کے ترجمان کیپٹن جیف ڈیفیز کا کہنا ہے کہ جنگی طیارے بھیجنے کا مقصد حسکہ میں کرد فورسز کی مدد اور ان کے تحفظ کو یقینی بنانا ہے کیونکہ بشار الاسد کی وفادار فوج کردو جنگجوؤں کے ٹھکانوں پر مسلسل بمباری کررہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ امریکا نے علی الاعلان کہا ہے کہ ہم کرد فورسز کو درپیش خطرات کا تدارک کریں گے اور کردوں کو شامی فوج کےحملوں سے تحفظ دلائیں گے۔

ادھرشام میں سرگرم کرد فورس نے ایک بیان میں بتایا ہے کہ الحسکہ اور اس کے آس پاس کے مقامات پر شامی فوج نے جمعرات اور جمعہ کو مسلسل وحشیانہ بمباری کی ہے جس کے نتیجے میں بڑی تعداد میں شہری بے گھر ہوئے ہیں۔

کردوں کی نمائندہ حمایۃ الشعب کا کہنا ہے کہ حسکہ میں بمباری کے ڈر سے ہزاروں افراد نقل مکانی کی کوشش کررہے ہیں۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ حسکہ میں جاری لڑائی اب تک کا سخت ترین معرکہ ہے۔

کرد فورسز کے ترجمان کا کہنا ہے کہ شامی فوج کی بمباری سے درجنوں افراد ہلاک ہوئے ہیں۔ خیال رہے کہ سنہ 2011ء کے بعد اسدی فوج نے الحسکہ کے علاقے میں کردوں کے ٹھکانوں پر پہلی بار بمباری شروع کی ہے۔

رواں سال اپریل میں القامشلی میں جھڑپوں کے بعد گذشتہ منگل کو کرد فورسز اور شامی فوج کے درمیان دوبارہ گھمسان کی جنگ شروع ہوئی تھی۔ کرد جنگجوؤں کا کہنا ہے کہ وہ اسدی فوج کو الحسکہ میں منہ توڑ جواب دینے اور شکست سےدوچار کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔ کردوں کا کہنا ہے کہ اسدی فوج زمینی کارروائی سے خائف ہے اور وہ مسلسل فضائی بمباری کر کے کرد فورسز کو نقصان پہنچانے کی کوشش کررہی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں