عراق : سبایکر قتل عام میں ملوّث 36 مجرموں کو پھانسی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

عراق میں سبایکر کے فوجی اڈے پر قتل عام میں ملوّث چھتیس مجرموں کو اتوار کے روز تختہ دار پر لٹکا دیا گیا ہے۔

شمالی شہر تکریت کے نواح میں واقع فوجی اڈے سبایکر پر جون 2014ء میں داعش کے جہادیوں اور ان کے اتحادی جنگجوؤں نے دھاوا بول کر قریباً سترہ سو فوجی رنگروٹوں کو اغوا کے بعد بے دردی سے قتل کر دیا تھا۔ عراق کی ایک فوجداری عدالت نے اس قتلِ عام کے الزام میں گذشتہ سال چھبیس افراد کو قصوروار قرار دے کر سزائے موت سنائی تھی۔

ان چھتیس افراد کو آج صبح جنوبی شہر ناصریہ کی جیل میں پھانسی دے دی گئی ہے۔واضح رہے کہ ان مجرموں نے عدالت میں فیصلہ سنائے جانے کے وقت سبایکر قتل عام میں ملوّث ہونے یا اس میں کسی قسم کے کردار کی تردید کی تھی۔

عراقی حکام نے 2015ء کے وسط میں تکریت پر سکیورٹی فورسز کے دوبارہ قبضے کے بعد اجتماعی قبروں سے قریباً چھے سو لاشیں نکالی تھیں۔ داعش کے جنگجوؤں نے انھیں دریا کنارے گولیاں مار کر لاشوں کو بہا دیا تھا یا ان کی اجتماعی قبروں میں تدفین کی تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں