.

یمن امن مذاکرات کی بحالی سے متعلق امریکی کوششوں کا خیر مقدم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمنی حکومت نے قومی یکجہتی کی حکومت تشکیل دینے کے مقصد سے امن بات چیت کے دوبارہ آغاز کے لیے امریکا ، خلیجی ممالک اور اقوام متحدہ کے منصوبے کا خیرمقدم کیا ہے۔

حکومت کی جانب سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ وہ کسی بھی پرامن حل کے ساتھ مثبت طور پیش آنے کے لیے تیار ہے۔ حکومت نے حال ہی میں جدہ میں ہونے والے اجلاس میں سامنے آنے والے ابتدائی افکار کا خیرمقدم کرتے ہوئے کہا کہ شرط یہ ہے کہ یہ متفقہ حوالوں کے ذیل میں ہونا چاہیں جن میں خلیجی منصوبہ اور اس پر عمل درامد کا طریقہ کار ، قومی مکالمے کی کانفرنس کے نتائج اور سلامتی کونسل کی قرارداد 2216 سرفہرست ہیں۔

یمنی حکومت نے یمنی عوام کی تکالیف ختم کرنے اور حوثی اور صالح ملیشیاؤں کی جانب سے شروع کی جانے والی جنگ پر روک لگانے کے واسطے ، علاقائی اور بین الاقوامی کوششوں کو بھرپور انداز سے سراہا۔

یمنی حکومت کا کہنا ہے کہ باغی ملیشیائیں درحقیقت حکومت ، عرب اتحاد، عالمی برادری اور اقوام متحدہ کی جانب سے پرامن حل تلاش کرنے کی خواہش کو غلط انداز سے سمجھ رہی ہیں۔ اس کے نتیجے میں یہ ملیشیائیں مشتبہ ایجنڈوں کے کام آنے کے لیے اپنے تباہ کن منصوبوں پر پہلے سے زیادہ عمل پیرا نظر آ رہی ہیں۔