.

مصر نے فلسطینی عازمینِ حج کے لیے غزہ بارڈر کراسنگ کھول دی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر نے غزہ کی پٹی کے ساتھ واقع رفح بارڈر کراسنگ کو تین دن کے لیے کھول دیا ہے لیکن صرف فلسطینی عازمین حج ہی اس سرحدی گذرگاہ کے ذریعے مصر کے علاقے میں داخل ہوسکیں گے اور پھر وہ وہاں سے حجاز مقدس کے سفر کے لیے روانہ ہوں گے۔

رفح کراسنگ کے ڈائریکٹر ہشام عدوان نے منگل کے روز ایک بیان میں بتایا ہے کہ آیندہ دنوں میں قریباً ڈھائی ہزار افراد اس گذرگاہ کے ذریعے حج کے لیے سعودی عرب جائیں گے۔

رفح گذرگاہ غزہ کی پٹی میں محصور لاکھوں فلسطینیوں کے لیے بیرونی دنیا سے رابطے کا واحد ذریعہ ہے۔مصر نے سنہ 2013ء کے بعد سے اس کو زیادہ تر بند ہی رکھا ہے کیونکہ ملک کے پہلے منتخب صدر ڈاکٹر محمد مرسی کی برطرفی کے بعد مصری حکومت اور حماس کے درمیان تعلقات کشیدہ ہوگئے تھے۔

قاہرہ حکومت نے حماس پر جزیرہ نما سیناء میں سکیورٹی فورسز پر حملے کرنے والے جنگجوؤں کی حمایت کا الزام عاید کیا تھا لیکن حماس نے ایسے الزامات کی سختی سے تردید کی تھی۔