.

الریاض نے حج سے متعلق ایرانی رہبر کا بیان مسترد کر دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے ولی عہد شہزادہ محمد بن نائف نے مملکت کے حج انتظامات سے متعلق ایرانی سپریم لیڈر آیت اللہ خامنہ ای کے اس بیان کا سخت نوٹس لیا ہے جس میں ایرانی رہبر نے الریاض کی انتظامی صلاحیت کو چیلنج کیا تھا. یاد رہے گزشتہ برس حج کے موقع پر بھگڈر کے نتیجے میں ایک ہزار سے زائد حجاج شہید ہوئے تھے۔

سرکاری نیوز ایجنسی 'ایس پی اے' کی جانب سے جاری کردہ بیان میں اعلی سعودی حکومتی اہلکار نے ایرانی الزام کو بے بنیاد قرار دیتے ہوئے مسترد کر دیا ہے. شہزادہ نائف نے ایرانی رہبر کو یاد دلایا سعودی عرب ماضی میں ایرانی حاجیوں کو بھی وہی سہولیات فراہم کرتا رہا ہے جو دیگر حجاج کرام کو دی جاتی تھیں. انہوں نے الزام لگایا کہ ایران حاجیوں کی سلامتی کو خطرے میں ڈال رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ سعودی عرب مناسک حج کے علاوہ کسی ایسے اقدام کی اجازت نہیں دے سکتا جس سے دوسرے حاجیوں کی سلامتی کو خطرہ لاحق ہو چاہے وہ اقدام ایرانی حاجیوں کی طرف سے ہی کیا جا رہا ہو

انہوں نے کہا کہ ایرانی حکام کو اس سے کوئی غرض نہیں کہ ان کے شہری حج کر پاتے ہیں یا نہیں. انہوں نے الزام لگایا کہ ایران حج کے نام پر سیاست کرنا چاہتا ہے اور اس مقدس فریضے میں نعرہ بازی کرتے ہوئے اسلامی تعلیمات کی خلاف ورزی کے لیے استعمال کرنا چاہتا ہے.
.