.

یمن : اتحادی طیاروں کی کارروائی ، میدی میں حوثی کمانڈر ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن کے شمال مغربی صوبے حجہ میں "العربیہ" کے ذرائع نے بتایا ہے کہ گزشتہ شب اتحادی افواج نے حرض میدی کے محاذ پر باغی ملیشیاؤں کے ٹھکانوں کو بم باری اور توپ کی گولہ باری کا نشانہ بنایا۔ اس کے نتیجے میں حوثی باغیوں کا مقامی کمانڈر علی عائض يمن اپنے درجنوں ساتھیوں سمیت ہلاک ہو گیا۔ مقامی ذرائع کے مطابق علی عائض یمن باغی ملیشیاؤں کا ایک اہم ترین میدانی کمانڈر تھا اور اس کی ہلاکت ملیشیاؤں کے لیے ایک بڑا دھچکا ہے۔

ادھر مارب صوبے کے مغرب میں صراوح کے محاذ پر آج صبح سویرے ایک دوسرا حوثی کمانڈر ابو بشار عبده سعيد اور اس کے متعدد ساتھی مارے گئے۔ یہاں سرکاری فوج اور ملیشیاؤں کے درمیان شدید معرکے جاری ہیں۔

اس سے قبل صراوح ضلع کے مغربی اطراف میں جھڑپوں کے دوران معزول صدر صالح کی ہمنوا فورسز کے درجنوں اہل کار ہلاک ہو گئے۔ ہلاک ہونے والوں میں جبران الحسینی شامل ہے جو معزول صدر کے ذاتی محافظین کا ایک افسر رہ چکا ہے۔

دوسری جانب ملیشیاؤں نے گزشتہ چند روز کے دوران صراوح کے محاذ پر اپنے جنگجوؤں کی بڑی کمک پہنچائی جس کا مقصد سرکاری فوج اور عوامی مزاحمت کاروں کی پیش قدمی کو روکنے اور اپنے قبضے سے نکل جانے والے علاقوں کو واپس لینے کی کوشش کرنا ہے۔

صعدہ میں ملیشیاؤں کے گڑھ کے قریب پہلی مرتبہ جھڑپیں ہوئیں۔ البیضاء صوبے کے ضلع ذی ناعم میں عوامی مزاحمت کاروں کے ساتھ جھڑپوں میں حوثی اور صالح ملیشیاؤں کے 5 ارکان مارے گئے۔ باغی ملیشیاؤں نے البیضاء شہر کے وسط میں رہائشی علاقوں کو کاٹیوشیا راکٹوں سے حملوں کا نشانہ بنایا جس کے نتیجے میں متعدد گھروں کو نقصان پہنچا۔

دارالحکومت صنعاء کے شمال مشرق میں نہم کے محاذوں پر شدید جھڑپوں کے دوران حوثی کمانڈر ابو عمرہ اور اس کا پورا گروپ مارا گیا۔ صعدہ صوبے میں قبائلی ذرائع نے بتایا ہے کہ صوبے کے جنوب مشرقی ضلع الصفرا میں باغی ملیشیاؤں اور عوامی مزاحمت کاروں کے درمیان جھڑپیں ہوئیں۔

دوسری جانب عرب اتحادی طیاروں نے صعدہ شہر کے نواح میں کہلان عسکری کیمپ پر چھ حملے کیے۔ اس کے علاوہ باقم ، الظاہر اور کتاف کے ضلعوں میں بھی مختلف علاقوں پر بم باری کی گئی۔

ذمار صوبے میں اتحادی طیاروں نے چار یلغاروں کے دوران باغی ملیشیاؤں کے ایک اسلحہ اور گولہ بارود ڈپو کو تباہ کردیا۔ تعز صوبے میں بھی عرب اتحادی طیاروں نے حوثی اور صالح ملیشیاؤں کے ٹھکانوں پر 7 حملے کیے۔