.

حلب : اپوزیشن گروپوں اور بشار کی فوج کے درمیان سڑکوں پر جنگ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام کے شہر حلب میں بشار کی فوج کے زیر کنٹرول علاقوں میں اپوزیشن گروپوں کی پیش قدمی کے بعد سڑکوں پر گھمسان کی جنگ جاری ہے۔

اس دوران اپوزیشن گروپوں نے اپنے زیر کنٹرول علاقوں پر سرکاری فوج کے کے ایک حملے کو پسپا کر دیا۔

شامی اپوزیشن گروپ حلب شہر کا محاصرہ ختم کرنے کے لیے معرکہ آرائی میں مصروف ہیں۔ اس دوران سرکاری فوج کے زیر کنٹرول متعدد علاقوں میں پیش قدمی بھی دیکھی جا رہی ہے۔ ان علاقوں میں 3 ہزار اپارٹمنٹ والا علاقہ اور نیو حلب کا علاقہ اہم ترین ہیں۔

لڑائی میں سرکاری فوج کو بھاری جانی نقصان اٹھانا پڑا ہے اور اس کے 55 ارکان مارے گئے ہیں۔

اس وقت جن علاقوں میں لڑائی جاری ہے وہ شامی حکومت کے لیے اولین دفاعی لائن کی حیثیت رکھتے ہیں۔ بالخصوص یہاں الاسد اکیڈمی بھی واقع ہے جو حلب میں دوسرا بڑا عسکری ٹھکانہ ہے۔

اگر اپوزیشن گروپ عسکری اکیڈمی پر کنٹرول حاصل کرنے میں کامیاب ہو گئے تو ان کے لیے الحمدانیہ کے علاقے کی جانب پیش قدمی آسان ہوجائے گی جو بشار کی فوج کے لیے اہم ترین اڈے کی حیثیت رکھتا ہے۔

الحمدانیہ کے علاقے میں حزب اللہ اور عراقی تنظیم حرکت النجباء کی ملیشیاؤں کا آپریشن روم واقع ہے۔ یہاں سے حلب میں اپوزیشن کے زیر کنٹرول مشرقی حصوں پر توپوں کے ذریعے گولہ باری کی جاتی ہے۔ یہ علاقہ شامی حکومت کا آخری گڑھ بھی ہے لہذا اس کو واپس لینے کے بعد اپوزیشن گروپ صلاح الدین کے علاقے تک پہنچ سکتے ہیں جس کے بعد وہ حلب کا محاصرہ توڑنے میں کامیاب ہوجائیں گے۔