.

حلب کے بارے میں سیکورٹی کونسل کا ہنگامی اجلاس آج ہوگا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

العربیہ کو اپنے سفارتی ذرائع کے حوالے سے معلوم ہوا ہے کہ شامی کے شہر حلب کے مشرقی علاقے کی بگڑتی ہوئی صورتحال پر غور کرنے کے لئے یو این سیکیورٹی کونسل کا اجلاس فرانس کی درخواست پر ہو رہا ہے۔

ذرائع کے مطابق حلب سے متعلق سیکیورٹی کونسل کے اجلاس سے پہلے عالمی ادارہ شمالی کوریا کے خلاف پابندیاں سخت کرنے سے متعلق غور کرے گا۔ شامی صورتحال کے بارے میں اجلاس گرینچ کے معیاری وقت دن دو بجے منعقد ہو گا۔

ہنگامی اجلاس کے دوران 15 رکنی یو این سیکیورٹی کونسل کو عالمی ادارے میں انسانی حقوق امور کے ایک عہدیدار مشرقی حلب کی صورتحال سے آگاہ کریں گے۔ نیز شام کے لئے اقوام متحدہ کے خصوصی ایلچی اسٹیفن ڈی میستورا ویڈیو لنک کے ذریعے خطاب کریں گے۔

یو این میں فرانس کے سفیر فرانسوا ڈیلاٹر کا کہنا ہے کہ "پیرس اور اس کے دوسرے پارٹنرز کا دوسری عالمی جنگ کے بعد ہونے والے سب سے بڑے قتل عام پر خاموش رہنا ممکن نہیں ہے۔"

ڈیلاٹر کے برطانوی ہم منصب ماتھیو راجکیورٹ نے بتایا کہ "برطانیہ شامی حکومت اور روس کو بمباری روکنے پر قائل کرنے کے لئے کوشاں ہے تاکہ انسانی نوعیت کی امداد فراہم کی جا سکے۔" انہوں نے واضح کیا کہ یو این کے پاس اہالیاں مشرقی حلب کی مدد اور وہاں سے زخمیوں کے انخلاء کا منصوبہ موجود ہے۔ شامی 'اپوزیشن' بھی اس پلان کی حمایت کرتی ہے۔ اپنی بات جاری رکھتے ہوئے انہوں نے کہا کہ "میں روس سے مطالبہ کرتا ہوں کہ اس منصوبے کو تسلیم کرنے کے لئے شامی حکومت پر اپنا رسوخ استعمال کرے۔

فرانسیسی وزیر خارجہ جین مارک ایرولٹ نے منگل کے روز حلب میں پیدا ہونے والے انسانی بحران پر غور کے لئے اقوام متحدہ سے فوری طور پر سیکیورٹی کونسل کا اجلاس بلانے کا مطالبہ کیا تھا۔ ایک بیان میں مسٹر ایرولٹ کا کہنا تھا کہ اس وقت لڑائی بند کرنا پہلے سے کہیں زیادہ ضروری ہے تاکہ کسی روک کے بغیر انسانی امداد پہنچائی جا سکے۔

شام کے بارے میں تین ملکی منصوبہ

نیویارک میں 'العربیہ' کے نامہ نگار کے مطابق مصر، اسپین اور نیوزی لینڈ کی جانب سے حلب میں دس دن کے لئے فائر بندی کا منصوبہ پیش کیا گیا ہے۔

سفارتی ذرائع نے "العربیہ" کو بتایا ابھی تک یہ امر واضح نہیں ہو سکا کہ شام میں تیزی سے بدلتے ہوئے زمینی حقائق کے پیش نظر تین ملکی مجوزہ منصوبے کو روس کی حمایت حاصل ہو سکے گی یا نہیں۔

توقع ہے کہ اس قرارداد پر اگلے چوبیس سے ارٹالیس گھنٹوں میں رائے شماری ہو گی۔

حلب میں تازہ ہلاکتیں

ادھر مشرقی حلب کی متعدد آبادیوں پر شامی حکومت، اس کی اتحادی ملیشیاؤں کے تازہ ترین حملوں میں 50 افراد ہلاک جبکہ 150 زخمی ہو گئے ہیں۔

حلب میں محکمہ شہری دفاع کے ایک عہدیدار ابراہیم ابو لیث نے ترک خبر رساں ادارے 'اناضول' کو بتایا کہ روس اور شامی فضائیہ نے شہر کی مشرقی آبادیوں پر تقریبا ۱50 حملے کئے ہیں جبکہ دوسری جانب ایرانی، عراقی اور لبنانی حزب اللہ سے وابستہ ملیشیائیں علاقے پر اپنے شدید زمینی حملے جاری رکھے ہوئے ہیں۔ ان ملیشیاؤں نے ایک اندازے کے مطابق شامی اپوزیشن کے زیر کنڑول علاقوں پر 200 راکٹ فائر کئے۔