.

تنقید کے باوجود حلب میں کارروائیاں جاری رکھیں گے : روس

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

روسی وزیر خارجہ سرگئی لاؤروف نے باور کرایا ہے کہ ان کا ملک مغربی ممالک کی تنقید سے قطع نظر شام اور حلب میں اپنی کارروائیاں جاری رکھے گا۔

جمعرات کے روز اپنے ترک ہم منصب مولود جاوش اوگلو کے ساتھ ایک پریس کانفرنس میں خطاب کرتے ہوئے لاؤروف نے کہا کہ " ماسکو شام میں بحران کے حوالے سے انقرہ کے ساتھ متفق ہے اور شامی بحران کے حل کے لیے ترکی کے تعاون سے متحرک ہونا ناگزیر ہے"۔

انہوں نے امید ظاہر کی کہ ترکی اور روس کے تعاون کا نتیجہ شام میں امن کی صورت میں سامنے آئے گا۔

لاؤروف نے باور کرایا کہ حلب کو دہشت گرد تنظیموں سے بچانے کے لیے روس کی کارروائیاں جاری رہیں گی۔

ادھر ترکی کے وزیر خارجہ کا کہنا ہے کہ ان کا ملک داعش کے خلاف لڑائی میں روس کے ساتھ تعاون کرے گا۔

اوگلو نے مزید کہا کہ " شام کا سیاسی حل تلاش کرنے کے لیے ہمیں فعال طریقہ کار کی ضرورت ہے"۔ ان کے مطابق بشار الاسد کی حکومت بے قصور افراد اور شہریوں کو ہلاک کر کر رہی ہے۔

ترک وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ " ہم فائر بندی اور شام کے بحران کا سیاسی حل تلاش کرنے کے خواہش مند ہیں"۔