.

موصل: داعش کے ٹھکانوں پر پہلی مرتبہ رات میں فضائی بم باری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراقی فضائیہ کے ایف-16 طیاروں نے موصل میں داعش تنظیم کے ٹھکانوں پر پہلی مرتبہ رات کے وقت حملے کیے۔ یہ پیش رفت امریکی ماہرین کی جانب سے بلد کے فضائی اڈے پر رات کے وقت ٹیک آف اور لینڈنگ میں کام آنے والے خصوصی آلات کی تنصیب کے بعد سامنے آئی ہے۔ ادھر زمینی لڑائی میں داعش کے جنگجوؤں نے موصل یونی ورسٹی کی باقی ماندہ عمارتوں کو تباہ کر کے مشترکہ عراقی افواج کی پیش قدمی کے سامنے علاقے کو خالی کر دیا اور خود دریائے دجلہ کے مغربی کنارے کی جانب منتقل ہوگئے۔ شدت پسند تنظیم ان عمارتوں کو قیام گاہ اور دھماکا خیز مواد تیار کرنے والے کارخانوں کے طور پر استعمال کر رہی تھی۔

داعش تنظیم نے مشترکہ عراقی افواج کے ہاتھوں واپس لے لیے جانے والے علاقوں میں متعدد حملے کیے۔ ان میں صلاح الدین صوبے کے علاقے الحراریات میں پاپولر موبیلائزیشن ملیشیا پر حملہ بھی شامل ہے۔

حالیہ عرصے میں داعش بڑی ہزیمتوں سے دوچار ہوئی ہے تاہم اس کے باوجود دہشت گرد تنظیم نے خراب موسم سے جو طیاروں کے ویژن میں رکاوٹ بنتا ہے ، فائدہ اٹھاتے ہوئے متعدد حملے کیے۔ ان میں موصل کے مشرق میں انسداد دہشت گردی فورسز اور جنوب اور مغرب میں مشترکہ عراقی فورسز پر حملے شامل ہیں۔ عراقی سکیورٹی ذرائع کے مطابق عراقی فوج کبھی کبھی بعض علاقوں سے پیچھے ہٹ جاتی ہے تاکہ دوبارہ سے اس کو واپس لیا جائے ، اس اقدام کا مقصد محض شہریوں کو جانی نقصان سے بچانا ہوتا ہے۔