.

بشار کی موجودگی میں سیاسی اقتدار کی منتقلی ممکن نہیں : ترکی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

انقرہ نے شام میں فائربندی اور سیاسی حل کے لیے ماسکو کے ساتھ دو معاہدوں تک پہنچ جانے کی تصدیق کی ہے۔

ترکی کے وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ ان کا ملک مکمل فائر بندی اور مذاکرات کے ذریعے سیاسی اقتدار کی منتقلی کا خواہش مند ہے تاہم بشار الاسد کی موجودگی میں یہ منتقلی ممکن نہیں اور شامی اپوزیشن بھی اس کو قبول نہیں کرے گی۔

ادھر روسی ایوانِ صدر کرملن نے کہا ہے کہ شام میں فائر بندی کے حوالے سے روس اور ترکی کی تجویز کے سلسلے میں اس کے پاس مطلوبہ معلومات نہیں ہیں لہذا وہ اس پر تبصرہ نہیں کر سکتا۔

دوسری جانب شامی اپوزیشن نے اعلان کیا ہے کہ شام کے تنازع میں با اثر طاقتوں کی سرپرستی میں جو اگر سنجیدہ نوعیت کے مذاکرات ہوں تو وہ ان میں شامل ہونے کے لیے تیار ہے۔

کچھ دیر قبل ترک میڈیا نے بتایا ہے کہ شام میں فائربندی کی شرائط پر روس اور ترکی کے درمیان معاہدہ طے پا گیا ہے۔

روس ، ایران اور ترکی نے گزشتہ ہفتے ماسکو میں بات چیت کے بعد امن معاہدے کے سلسلے میں ثالثی کے طور پر اپنی خدمات پیش کرنے کا اظہار کیا تھا۔ تینوں ملکوں نے چند بنیادی اصول متعین کیے تھے جن کو طے پائے جانے والے کسی بھی معاہدے کا حصہ بنانا ضروری ہے۔

انقرہ اور ماسکو شامی تنازع میں ایک دوسرے کے مخالف سمت میں کھڑے ہیں۔ ترکی کی جانب سے بار ہا شامی صدر بشار الاسد کے رخصت ہو جانے کا مطالبہ کیا جاتا رہا ہے جب کہ روس اور ایران شامی صدر کو مکمل سپورٹ پیش کر رہے ہیں۔

شام کے حوالے سے ترکی اور روس کئی ماہ سے تعاون میں مصروف ہیں بالخصوص ایک دوسرے کے ساتھ تعلقات معمول پر آنے کے بعد.. گزشتہ برس ترکی کی جانب سے روسی جنگی طیارہ گرائے جانے کے بعد دونوں ملکوں کے درمیان تعلقات سنگین بحران کا شکار ہو گئے تھے۔